آئی ایم ایف کو منانے کیلئے گیس کے گردشی قرضے ختم کا پلان نیوز 360 نے حاصل کرلیا

وزارت خزانہ نے گردشی قرضوں کی ادائیگی کی تیاری کرلی ہے  ملک میں توانائی کے گردشی قرضوں کو ختم کرنے کیلئے حکومت نے 543 ارب روپے کا منصوبہ بنا لیا گیا ہے۔

وفاقی حکومت نے آئی ایم ایف کو منانے کی سرتوڑ کوششیں کرتے ہوئے گیس کے شعبے میں 1550 ارب روپے کے گردشی قرضے اتارنے کا پلان تیار کرلیا۔

وزارت خزانہ کے ذرائع کے مطابق حکومت کا گردشی قرضوں کو کم کرنے کے لئے پلان تیار کرلیا یے۔ آئی ایم ایف کی شرائط پر عمل کو یقینی بنایا جائے گا۔

یہ بھی پڑھیے

انڈس موٹر کے بعد ہنڈا اٹلس نے بھی مہینے میں دوسری بار گاڑٖیاں مہنگی کردیں

اسٹاک ایکسچینج میں 719 پوائنٹس کا اضافہ، ڈالر اور سونے کی قیمتوں میں کمی

وزارت خزانہ نے گردشی قرضوں کی ادائیگی کی تیاری کرلی ہے  ملک میں توانائی کے گردشی قرضوں کو ختم کرنے کیلئے حکومت نے 543 ارب روپے کا منصوبہ بنا لیا گیا ہے۔

حکومت گردشی قرضوں کی مد میں سوئی سدرن گیس کو 241 ارب روپے ادا کرے گی اور گردشی قرضوں کی مد میں سوئی نادرن گیس  کو بھی 302 ارب روپے ادا کیے جائیں گے۔

سوئی سدرن گیس کمپنی اور سوئی ناردرن کو مجموعی طور پر 543 ارب روپے ادا کیے جائیں گے۔

ایس ایس جی سی کو ملنے والی رقم سے او جی ڈی سی ایل کے گردشی قرضوں کو ختم کیا جائے گا۔

ایس ایس جی سی ، او جی ڈی سی ایل کو 154 ارب روپے کا قرض واپس کرسکے گی۔

ایس ایس جی سی گردشی قرضوں کی مد میں گورنمنٹ ہولڈنگ نجی کمپنوں کو 87 ارب روپے ادا کرے گی۔

حکومت سوئی نادرن گیس پرائیویٹ لمیٹڈ کو 302 ارب روپے گردشی قرضوں کی مد میں ادا کرے گی۔ ایس این جی پی ایل گردشی قرضوں کی مد میں او جی ڈی سی ایل ، پی پی ایل اور جی ایچ پی ایل کو رقم ادا کرے گی۔

سوئی نادرن گیس او جی ڈی سی ایل کو 172 ارب روپے ادا کرسکے گی۔ سوئی نادرن گیس پی پی ایل کو 90 ارب روپے کے واجبات ادا کرسکے گی۔

سوئی نادرن گیس ، گورمنٹ ہولڈنگ نجی کمپنیوں کو 40 ارب روپے ادا کرسکے گی ۔ گردشی قرضوں کی ادائیگی کے بعد او جی ڈی سی ایل ، پی پی ایل اور جی ایچ پی ایل کے شیئرز ڈیویڈینڈ میں بھی ریکارڈ اضافہ ہوگا۔

ذرائع کے مطابق آئی ایم ایف کو منانے کے لیے سوئی سدرن کے لیے گیس کے ریٹ 65 روپے فی ایم ایم بی ٹی یو بڑھائے جائیں گے جبکہ سوئی نادرن گیس کمپنی کے ریٹ میں 74 فیصد اضافہ کیا جائے گا۔

متعلقہ تحاریر