مکانات کی تعمیر کے لیے قرضوں میں 36 فیصد اضافہ

اسٹیٹ بینک کے مطابق رواں مالی سال میں مارچ تک گھریلو قرضوں کا حجم 202 ارب روپے ہوگیا ہے۔

اسٹیٹ بینک آف پاکستان (ش بی پی) کا کہنا ہے کہ مالی سال 2020-21 کے پہلے 9 ماہ کے دوران مکانات کی تعمیر کے لیے قرضوں کے حصول میں 36 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

مرکزی بینک کے جاری کردہ اعدادوشمار کے مطابق رواں مالی سال میں مارچ تک گھریلو قرضوں کا حجم 202 ارب روپے ہوگیا ہے جبکہ گذشتہ مالی سال 2019-20 کے آخر تک گھریلو قرضوں کا حجم 148 ارب روپے تھا۔

یہ بھی پڑھیے

پیرس کلب کے تحت پاکستانی قرضے کی ادائیگی موخرکرنے کا اعلان

اسٹیٹ بینک کے مطابق کمرشل بینکس کو مکانات کی تعمیر کے لیے اپریل 2021 تک 52 ارب روپے سے زیادہ کے قرضوں کی درخواستیں موصول ہوئی ہیں۔

ہاؤسنگ سیکٹر کو فروغ دینے کے لیے اسٹیٹ بینک نے تمام کمرشل بینکس کو ہدایت کی ہے کہ ہاؤسنگ لون کا 5 فیصد حصہ نجی تعمیراتی شعبے کو دیا جائے۔

مرکزی بینک کے اعدادوشمار کے مطابق کمرشل بینکس کی جانب سے اب تک 15 ارب روپے کے قرضوں کی منظوری دے دی گئی ہے جبکہ قرضوں کے لیے موصول ہونے والی دیگر درخواستیں جانچ پڑتال اور منظوری کے مراحل میں ہیں۔

واضح رہے کہ کمرشل بینکوں نے ملک بھر میں میرا پاکستان میرا گھر نامی ہاؤسنگ فنانس اسکیم کے تحت اپنی 50 فیصد (تقریباً 7 ہزار 700) برانچز کو ملک بھر میں درخواستیں وصول کرنے کے لیے نامزد کیا ہے۔

متعلقہ تحاریر