تعمیراتی شعبے کی ایمنسٹی اسکیم میں توسیع کا امکان

مالی سال 2020-21 میں وفاقی حکومت کی جانب سے تعمیراتی شعبے کو دی گئی ایمنسٹی اسکیم کی مدت 30 جون کو ختم ہورہی ہے۔

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی حکومت کی جانب سے آئندہ مالی سال 2021-22 کے وفاقی بجٹ کے موقع پر تعمیراتی شعبے کی ایمنسٹی اسکیم میں توسیع کا امکان ہے۔ ذرائع کے مطابق وفاقی حکومت نے فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کو خصوصی ہدایات جاری کردی ہیں۔

ایف بی آر کے ذرائع کا کہنا ہے کہ عالمی مالیاتی ادارے (آئی ایم ایف) کی منظوری کے بعد تعمیراتی شعبے کو ایمنسٹی دی جائے گی، ایمنسٹی اسکیم کے تحت مدت میں 3 سے 6 ماہ توسیع ممکن ہے۔

یہ بھی پڑھیے

پاکستان کے پہلے ڈیجیٹل بینک کا آغاز رواں ماہ

ایف بی آر کے مطابق مالی سال 2020-21 کے دوران وفاقی حکومت کی جانب سے تعمیراتی شعبے کے لیے ایمنسٹی اسکیم متعارف کروائی گئی تھی۔ مالی سال 2020-21 میں اسکیم کے تحت اب تک 140 ارب روپے مالیت کے 350 منصوبے رجسٹر ہوئے ہیں۔ تعمیراتی شعبے کو دی گئی ایمنسٹی اسکیم کی ڈیڈ لائن 30 جون 2021 کو ختم ہو جائے گی۔

ایف بی آر کے ذرائع کا کہنا ہے کہ کنسٹرکشن ایمنسٹی اسکیم کی مدت میں توسیع عالمی مالیاتی ادارے (آئی ایم ایف) کی رضامندی پر کی جائے گی جس کے بعد ایمنسٹی اسکیم کی مدت ستمبر یا دسمبر 2021 تک بڑھ جائے گی۔

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی حکومت 11 جون کو مالی سال 2021-22 کے لیے اپنا آئندہ بجٹ پیش کرنے جارہی ہے۔ پی ٹی آئی حکومت کے چوتھے وزیر خزانہ شوکت ترین اپنا پہلا بجٹ پارلیمان میں پیش کریں گے۔

ذرائع کے مطابق آئندہ مالی سال 2021-22 کے بجٹ کا حجم لگ بھگ 8 ہزار ارب روپے ہوگا جس میں ترقیاتی اسکیموں کے لیے 900 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔ دفاعی بجٹ کے لیے تقریباً 1400 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں جبکہ صوبوں کا ترقیاتی بجٹ 1000 ارب روپے مختص کیا گیا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ آئندہ مالی سال کا بجٹ خسارہ 5 سے 6 فیصد اضافے کے حساب سے 2 ہزار 915 ارب روپے ہوسکتا ہے۔

متعلقہ تحاریر