وفاق نے ترقیاتی بجٹ میں خیبرپختونخوا کا حصہ کم کردیا

خیبرپختونخوا کے ترقیاتی بجٹ میں 26 ارب روپے کی کمی کردی گئی ہے۔

وفاقی وزیرخزانہ شوکت ترین نے مالی سال 2021۔22 کا وفاقی بجٹ قومی اسمبلی میں پیش کردیا ہے جس کے مطابق خیبرپختونخوا کے ترقیاتی بجٹ میں کمی کی گئی ہے۔

مالی سال 2021-22 کے وفاقی بجٹ کا کُل حجم 8 ہزار 487 ارب روپے ہے۔ ترقیاتی بجٹ میں تمام صوبوں کا حصہ بڑھایا گیا ہے لیکن خیبرپختونخوا کے بجٹ میں 26 ارب روپے کی کمی کردی گئی ہے۔ پبلک سیکٹر ڈویلپمنٹ پروگرام (پی ایس ڈی پی) کے لیے خیبرپختونخوا کے لیے 248 ارب روپے رکھے گئے ہیں جو گزشتہ 274 ارب روپے کے بجٹ سے 10 فیصد کم ہیں۔

پبلک سیکٹر ڈویلپمنٹ پروگرام کے لیے مجموعی طور پر 2102 ارب روپے رکھے گئے ہیں جو گزشتہ بجٹ کے 1527 ارب روپے سے 36.4 فیصد زیادہ ہیں۔ اس مد میں وفاق کے لیے 900 ارب روپے رکھے گئے ہیں جو پچھلے بجٹ کے 660 ارب روپے سے 36 فیصد زیادہ ہیں۔

یہ بھی پڑھیے

آئندہ مالی سال کے ترقیاتی بجٹ کی تفصیلات

ترقیاتی بجٹ میں پبلک سیکٹر ڈویلپمنٹ پروگرام کے لیے پنجاب کو 500 ارب روپے دیئے گئے ہیں جو گزشتہ 310 ارب روپے کے بجٹ سے 61 فیصد زیادہ ہیں۔ اسی مد میں سندھ کے لیے 321 ارب روپے رکھے گئے ہیں جو گزشتہ 194 ارب روپے کے بجٹ سے 65 فیصد زیادہ ہیں۔ جبکہ بلوچستان کے لیے 133 ارب روپے رکھے گئے ہیں جو پچھلے 89 ارب روپے کے بجٹ سے 9 فیصد زیادہ ہیں۔

نیوز 360 کو موصول بجٹ دستاویز کے مطابق معیشت کا حجم 52 ہزار 57 ارب روپے تک پہنچ گیا ہے۔ بجٹ میں معاشی ترقی کی شرح 4.8 فیصد ہوگی جبکہ بجٹ خسارہ 5.6 فیصد یعنی 2 ہزار 915 روپے ہوگا۔

بجٹ دستاویز کے مطابق 3 ہزار 345 ارب روپے این ایف سی کے صوبوں کو ملیں گے۔ اس بجٹ میں ٹیکس آمدن 5 ہزار 820 ارب جبکہ نان ٹیکس آمدن 1 ہزار 420 ارب روپے ہوگی۔

متعلقہ تحاریر