بیرون ممالک مقیم پاکستانیوں نے ترسیلات زر کے ریکارڈ توڑ دیے

اعدادوشمار کے مطابق مالی سال 2020-21 میں بیرون ممالک میں مقیم پاکستانیوں نے 29 ارب 40 کروڑ ڈالرز کے ترسیلات بھیجے تھے۔

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی وفاقی حکومت کی معاشی پالیسیز پر اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے بیرون ممالک میں مقیم پاکستانیوں نے مالی سال 2020-21 میں ریکارڈ ترسیلات زر ملک میں بھیجی ہیں۔

وزیراعظم پاکستان عمران خان کے سابق معاون خصوصی برائے اوورسیز پاکستانیز ذلفی بخاری نے مالی سال 2020-21 ترسیلات زر کے اعدادوشمار سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر شیئر کیے ہیں۔

یہ بھی پڑھیے

روشن ڈیجیٹل اکاؤنٹس بلندیوں کی جانب رواں دواں

انہوں نے لکھا ہے کہ بیرون ممالک میں مقیم پاکستانیوں نے مالی سال 2020-21 کے اختتام پر 29 ارب 40 کروڑ ڈالرز ترسیلات زر کی مد میں پاکستان بھیجے ہیں۔

اعدادوشمار کے مطابق مالی سال 2019-20 بیرون ممالک میں مقیم پاکستانیوں نے 23 ارب 13 کروڑ ڈالرز کے ترسیلات زر بھیجے تھے جو مالی سال 2020-21 کے مقابلے میں 27 فیصد کم تھے۔ اعدادوشمار کے مطابق مالی سال 2020-21 کے ہر ماہ کے دوران ترسیلات زر میں 8 فیصد اضافہ ریکارڈ کیا گیا۔

ذلفی بخاری کے ٹوئٹ کے مطابق مالی سال 2020-21 میں سب سے زیادہ ترسیلات زر سعودی عرب اور متحدہ امارات سے موصول ہوئیں، جو بالترتیب 7 ارب 60 کروڑ ڈالرز اور 6 ارب 1 کروڑ ڈالرز تھے۔ برطانیہ سے تقریباً 4 ارب ڈالرز کے ترسیلات زر موصول ہوئے۔

سابق معاون خصوصی ذلفی بخاری نے لکھا ہے کہ مالی سال 2021-22 ان اعدادوشمار کو 32 ارب ڈالرز تک لے جانے کی کوشش کریں گے۔

ذلفی بخاری نے لکھا ہے کہ بیرون ممالک میں مقیم پاکستانیوں کو سہولیات فراہم کرنے کے ساتھ ساتھ انہیں انتخابات میں ووٹنگ کا بھی حق دیا جانا بہت ضروری ہے تاکہ وہ لوگ پاکستان کی ترقی میں مزید کردار ادا کرسکیں۔

Facebook Comments Box