سام سنگ فونز اب پاکستان میں بنیں گے

کورین کمپنی اور لکی گروپ کے درمیان معاہدہ طے پاگیا

کورین ٹیک کمپنی سام سنگ اور لکی گروپ کے درمیان پاکستان میں موبائل فونز کی مینوفیکچرنگ کا معاہدہ طے پاگیا ہے۔ موبائل مینوفیکچرنگ یونٹ دسمبر 2021 تک پیداوار شروع کردے گا۔ سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے صنعت و پیداوار نے مارچ سے جون تک 21 موبائل فونز کمپنیز کو گرین سگنل دیا تھا۔

سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے صنعت و پیداوار کا اجلاس چیئرمین کمیٹی سینیٹر فیصل سبز واری کی زیرصدارت ہوا۔ صنعت و پیداوار کے انجینیئرنگ ڈویلپمنٹ بورڈ نے موبائل ڈیوائس مینوفیکچرنگ یونٹ کی منظوری دیتے ہوئے سام سنگ سمیت 21 موبائل کمپنیز کو مینوفیکچرنگ یونٹ لگانے کی اجازت دی تھی۔

یہ بھی پڑھیے

سام سنگ کا پاکستان میں موبائل فون مینوفیکچرنگ یونٹ لگانے کا عندیہ

لکی گروپ کے سی ای او محمد علی ٹبہ نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر پیغام شیئر کرتے ہوئے اللہ کا شکر ادا کیا ہے۔

سام سنگ اور لکی گروپ کے درمیان ہونے والے معاہدے پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے وفاقی وزیر حماد اظہر نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر پیغام شیئر کرتے ہوئے لکھا ہے کہ “پاکستان میں سمارٹ فونز کی تیاری کےلیے باہم اشتراک پر سام سنگ اور لکی گروپ  کو مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ اس نوعیت کی مثبت پیشرفتیں DIRBS سسٹم کی کامیابی کی علامتیں ہیں جس سے موبائل فونز کی اسمگلنگ کا خاتمہ ہوگا اور گزشتہ برس تیار کی گئی موبائل مینوفیکچرنگ پالیسی کا نفاذ ممکن ہوسکےگا۔”

دوسری جانب وزیراعظم عمران خان کے معاون خصوصی برائے سیاسی امور ڈاکٹر شہباز گل نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنے پیغام میں لکھا ہے کہ “الحمدللہ، پاکستان کے لئے ایک اور اچھی خبر، سام سنگ نے لکی گروپ کے ساتھ مل کر پاکستان میں موبائل کی تیاری کے لیے معاہدہ کیا ہے، حکومت کی مقامی مینوفیکچرنگ پالیسی کی کارکردگی کا ثبوت ہے، انشااللہ یہ یونٹ دسمبر 2021 تک پیداوار کا آغاز کر دے گا۔”

 

سویڈن کی کمپنی ٹونڈرا فاؤنڈر نے لکی گروپ اور سام سنگ کے درمیان طے پانے والے معاہدے کا خیرمقدم کرتے ہوئے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر پیغام شیئر کیا ہے۔

واضح رہے کہ نیوز 360 نے 8 جولائی 2021 کو خبر دی تھی کہ ٹیک کمپنی سام سنگ نے پاکستان میں موبائل مینوفیکچرنگ یونٹ لگانے کا عندیہ دیا تھا۔

موبائل فونز اور پاکستانی صارفین

پاکستان کے ادارہ شماریات (پی بی ایس) کے مطابق مالی سال 2020-21 کے دوران 1 ارب 86 کروڑ ڈالرز کے موبائل فونز امپورٹ کیے گئے تھے جبکہ مالی سال 2019-20 میں یہ درآمدات 1 ارب 13 کروڑ 8 لاکھ ڈالرز تھیں۔

اقتصادی سروے 2020-21 کے مطابق جولائی 2012 سے فروری 2021 کے دوران ٹیلی کام سیکٹر میں براہ راست غیر ملکی سرمایہ کاری (ایف ڈی آئی) 3 ارب 9 کروڑ ڈالرز رہی تھی۔

اعدادوشمار کے مطابق مالی سال 2020-21 کے پہلے 8 ماہ کےدوران ٹیلی کام سیکٹر میں مجموعی طور پر سرمایہ کاری کا حجم 46 کروڑ 50 لاکھ ڈالرز رہا تھا۔ ایک اندازے کے مطابق پاکستان میں موبائل فونز استعمال کرنے والے صارفین کی تعداد 18 کروڑ 3 لاکھ تک پہنچ گئی ہے۔

Facebook Comments Box