ایف آئی اے نے سوشل میڈیا سے تاحال نازیبا مواد نہیں ہٹایا، ادکارہ مہوش حیات

سندھ ہائی کورٹ میں اداکارہ مہوش حیات اور کبریٰ خان کے خلاف نازیبا سوشل میڈیا مہم سے متعلق کیس کی سماعت میں مہوش حیات نے کہا کہ ایف آئی نے  تاحال مواد نہیں ہٹایا جس پر عدالت نے کہاکہ ایجنسی اپنا کام کررہی ہے، پی ٹی اے کو ہدایات جاری کردیں ہیں

سندھ ہائی کورٹ میں اداکارہ مہوش حیات اور کبریٰ خان کے خلاف سوشل میڈیا مہم چلانے سے متعلق ایف آئی اے نے  پیش رفت رپورٹ عدالت میں پیش کردی ہے ۔

سندھ ہائی کورٹ میں اداکارہ مہوش حیات اور کبریٰ خان کے خلاف سوشل میڈیا مہم چلانے سے متعلق عادل راجا فاروق کے خلاف دائر مقدمے کی سماعت ہوئی ۔

یہ بھی پڑھیے

عادل راجہ کے الزام پر کبریٰ خان، مہوش حیات اور سجل علی کاسخت ردعمل

دوران سماعت مہوش حیات کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ وفاقی تحقیقاتی ایجنسی نے تاحال سوشل میڈیا سے مواد نہیں ہٹایا اور نہ ہی کوئی کارروائی عمل میں لائی گئی  ہے ۔

اداکارہ کبریٰ خان کے وکیل نے بھی عدالت کو بتایا کہ ایف آئی اے نے میری موکلہ کے حوالے سے سوشل میڈیا پر مواد کے بارے میں تاحال کوئی جواب نہیں دیا ۔

عدالت نے کبریٰ خان کے وکیل کو کہا کہ وفاقی تحقیقاتی ایجنسی اپنا کام کرہی ہے لہذا اسے کام کرنے دیں۔ آپ کی موکلہ کا معاملہ آئندہ سماعت پر دیکھیں گے ۔

ایف آئی اے کی پیش رفت رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اداکاراؤں کے خلاف مہم چلانے والے اکاؤنٹس بلاک کرنے کے لئے پی ٹی اے کو معاملہ بھیج دیا گیا ہے۔

ایف آئی اے نے اپنی پیش رفت رپورٹ میں کہا کہ عدالتی حکم پر مہوش حیات کے خلاف سوشل میڈیا اور یوٹیوب پر موجود مواد ہٹانے کیلئے ہدایات جاری کردی ہیں۔

یہ بھی پڑھیے

مہوش حیات اور شفا یوسف زئی کی ایف آئی اے پر کڑی تنقید

واضح رہے کہ اداکاراؤں کی جانب سے دائر درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ سابق فوجی افسر عادل راجا فاروق نے جھوٹے الزامات عائد کرکے ہماری تذلیل کی ۔

درخواست میں کہا گیا تھا کہ یوٹیوبر راجا عادل جوکہ سابق فوجی  افسر ہیں نے جھوٹے اور من گھڑت الزامات سے اداکاراؤں کی عزت اور وقار کو مجروح کیا  ہے ۔

یاد رہے کہ میجر ریٹائرڈ عادل فاروق مہوش حیات اور کبریٰ خان سمیت 4 اداکاراؤں پر نازیبا الزامات عائد کیے تھے جس کے خلاف اداکاراؤں نے عدالت سے رجوع کیا ۔

متعلقہ تحاریر