ابرار الحق نے پارٹی چھوڑتے ہی کنسرٹ میں شرکت کو غلطی قرار دیدیا

مجھے پروگرام میں شرکت نہیں کرنی چاہیے تھی کیوں کہ اس پروگرام میں شرکت سے لوگوں کے جذبات کو ٹھیس پہنچی ہے، بدمزگی ن لیگ ک حامی صحافیوں نے پیدا کی، ابرار الحق:گلوکارہ عینی خالد ساتھی گلوکار کے دفاع میں سامنے آگئیں۔

گلوکار ابرارالحق نے تحریک انصاف چھوڑنے  کے فوری بعد لندن میں کنسرٹ کرنے پر اپنی غلطی تسلیم کرلی تاہم ابرار الحق نے لندن میں کنسرٹ کے دوران بدمزگی پیدا کرنے والوں کو ن لیگ کے حامی صحافی قرار دیدیا۔

دوسری جانب معروف اینکر فریحہ ادریس نے پی ٹی آئی سے کنارہ کشی کے فوری بعد لندن میں کنسرٹ کرنے کو ابرار الحق کی غلطی قراردیا تو   گلوکارہ عینی خالد  گلوکار کے دفاع میں سامنے آگئیں۔

یہ بھی پڑھیے

فرحان سعید کو سیاستدانوں کی پریس کانفرنسز دیکھ کر شرمندگی کیوں ہونے لگی؟

بہروز سبزواری اپنے بیان سے پھر گئے،لیک آڈیو کو مصنوعی ذہانت کا نتیجہ قراردیدیا

اے آر وائی نیوز کے پروگرام الیونتھ  آور میں میزبان وسیم بادامی کو دیے گئے انٹرویو میں ابرار الحق  نے بتایا کہ اس پراپرٹی ایکسپو کانسرٹ کی منصوبہ بندی 2 ماہ پہلے سے ہی کی گئی تھی، یہ پروگرام علیم خان کا پروگرام نہیں تھا بلکہ پاکستان کے بڑے بزنس ٹائیکون کے زیر اہتمام منعقدہ پراپرٹی ایکسپو  تھا جس میں میری شرکت کی وجہ چیریٹی فنڈنگ تھی لیکن اس کے بعد حالات تبدیل ہوگئے اور میں نے سیاست سے کنارہ کشی کرلی۔

ابرار الحق نے کہا کہ لندن کنسرٹ میں بدمزگی کرنے والے لوگ پی ٹی آئی کے نہیں بلکہ مسلم لیگ (ن) کے صحافی تھے جو فقیروں کی طرح ہر وقت ایون فیلڈ کے باہر کھڑے رہتے ہیں اور انہوں نے منصوبہ بندی کے ذریعے بدمزگی پیدا کی۔

ابرار الحق نے مزید بتایا کہ انھیں اس پروگرام میں شرکت نہیں کرنی چاہیے تھی کیوں کہ اس پروگرام میں شرکت سے لوگوں کے جذبات کو ٹھیس پہنچی ہے۔

انہوں نے کہاکہ اگر وہ یہ کنسرٹ نہ کرتے تو ان کی رفاہی تنظیم سہارا فار لائف ٹرسٹ بند ہوجاتی، انہوں نے ناراض لوگوں سے تہہ دل سے معذرت کی۔

دوسری جانب معروف اینکر فریحہ ادریس  نے پی ٹی آئی سے کنارہ کشی کے فوری بعد لندن میں کنسرٹ میں شرکت کو ابرارالحق کی غلطی قرار دیدیا۔

فریحہ ادریس نےاپنے ٹوئٹ میں  لکھاکہ”ابرار الحق کو اچھل کود کرنے سے پہلےکم ازکم ایک یا دو ہفتے کامعقول انتظار کرلینا  چاہیے تھا۔ یہ بتانے کی ضرورت نہیں کہ وہ  اپنے کارکنوں کو پریشانی  کے عالم اور جیلوں میں چھوڑ کر کاروبار کرنے چل پڑے۔

فریحہ ادریس کے ٹوئٹ پر ردعمل دیتے ہوئے گلوکارہ عینی خالد  نے لکھا کہ”میں کسی کی طرفداری یا جانبدارانہ رائے زنی نہیں کررہی لیکن شوز عموماً پیشگی  بک کیے جاتے ہیں ، منتظمین  پرفارمنس کی فیس  پیشگی ادا کردیتے ہیں اور ہوائی جہاز کے ٹکٹ بک کرلیجاتے ہیں ، اس  کے نتیجے میں فنکار  قانونی معاہدوں کے پابند ہوتے ہیں ۔

گلوکارہ نے بتایا کہ کبھی کبھار افسوس بھی ہوتا ہے کہ اگر کوئی رشتہ دار فوت ہو جائے تو بھی شو جاری رکھنا پڑتا ہے اور آپ کو جاکر پرفارم کرناپڑتا ہے۔

متعلقہ تحاریر