مہروز وسیم عثمان مختار کے ہراسگی الزام پر سامنے آگئیں

بقول خاتون ڈائریکٹر عثمان مختار کام کرنے کی اخلاقیات سے ناآشنا ہیں۔

پاکستانی اداکار عثمان مختار نے شوبز انڈسٹری سے تعلق رکھنے والی خاتون کا نام نہ لیتے ہوئے ان پر ہراسگی کا الزام لگایا جس پر مہروز وسیم نامی خاتون ڈائریکٹر خود ہی سامنے آگئیں۔

مہروز وسیم نے فوٹو شیئرنگ ایپ انسٹاگرام پر ایف آئی اے کو لکھے گئے وضاحتی بیان کی تصویر شیئر کی۔ خاتون نے بیان میں دعویٰ کیا کہ انہوں نے 2016 میں عثمان مختار کو آزاد نامی گانے کی میوزک ویڈیو بنانے کے لیے بطور ڈائریکٹر کاسٹ کیا تھا۔ خاتون کے مطابق اداکار نے ان کے ہمراہ کام کرنے کے بجائے انہیں گرل فرینڈ کی باتوں سمیت اپنی نجی زندگی کے معاملات بتانا شروع کردیے۔ مہروز وسیم نے یہ بھی لکھا کہ عثمان مختار بتاتے تھے کہ انہیں کس قسم کی خواتین پسند ہیں۔ خاتون نے مزید کہا کہ عثمان مختار نے وقت پر کام مکمل نہیں کیا جس کی وجہ سے انہوں نے اپنا گانا خود بنایا۔

 

View this post on Instagram

 

A post shared by Mehrooz Waseem (@artbymehrooz)

یہ بھی پڑھیے

عثمان مختار کے ہراسگی الزام پر سوالیہ نشان

بقول خاتون ڈائریکٹر عثمان مختار کام کرنے کی اخلاقیات سے ناآشنا ہیں کیونکہ میں انہیں کام کے لیے فون کرتی رہی مگر انہوں نے کوئی جواب نہیں دیا بعد میں مجھ پر الزامات لگاتے ہوئے ایف آئی اے میں درخواست درج کرادی۔ مہروز وسیم نے انسٹاگرام پر عثمان مختار کے ساتھ ہونے والی گفتگو کے اسکرین شاٹس اور وائس نوٹس بھی شیئر کیے۔

 

View this post on Instagram

 

A post shared by Mehrooz Waseem (@artbymehrooz)

خاتون ہدایتکار نے وائس نوٹس کے بارے میں تفصیلات بتاتے ہوئے لکھا کہ عثمان مختار نے انہیں انسٹاگرام اکاؤنٹ سے ان کی ایک تصویر ہٹانے کے لیے دھمکی دی جس کے استعمال نہ کرنے کے بارے میں انہوں نے کبھی کچھ نہیں کہا تھا۔

 

View this post on Instagram

 

A post shared by Mehrooz Waseem (@artbymehrooz)

مہروز وسیم نے واضح کیا کہ انہوں نے اس تصویر کو استعمال اس لیے کیا کہ عثمان مختار نے کبھی وہ تشہیری مواد نہیں بنایا تھا جس کا انہوں نے وعدہ کیا تھا۔

Facebook Comments Box