نازیہ حسن کی موت کے 21 سال بعد تنازعہ کیوں کھڑا ہوا؟

اشتیاق بیگ کا کہنا ہے کہ زوہیب  حسن نازیہ کی شادی کروانا ہی نہیں چاہتے تھے کیونکہ وہ ان کی کمائی سے گزارا کررہے تھے۔

پاکستان  کی  معروف  گلوکارہ  نازیہ  حسن  کی  آج  اکیسویں  برسی  ہے، اس  موقعے  پر  ان  کے  بھائی  زوہیب  حسن  نے  بہن  کی  موت  کا  ذمہ  دار  ان  کے  شوہر مرزا اشتیاق بیگ کو  ٹھہرایا۔ نیوز360  نے سنگین  الزامات  پر اشتیاق بیگ  سے  ان کا  موقف  جاننے  کے  لیے  رابطہ  کیا  تو  انہوں  نے زوہیب  حسن پر  ایک  ارب  کے ہرجانے کا دعویٰ دائر کرنے کا اعلان کردیا۔

نازیہ  حسن13  اگست  سن  2000  کو  اس  جہان  فانی  سے  کوچ  کرگئیں۔  وہ سرطان  کے  عارضے  میں  مبتلا  تھیں۔  نازیہ  حسن  کی  اکیسویں  برسی  پر ان  کی  موت  کے  حوالے  سے  تنازعہ  کھڑا  ہوگیا  ہے۔  معاملہ  زوہیب  حسن کے  بیان  سے  شروع  ہوا۔  انہوں  نے  سما  نیوز  سے  گفتگو  کرتے  ہوئے  کہا  کہ  نازیہ حسن نے مرنے سے پہلے برطانوی پولیس کو دیے گئے حلفیہ بیان میں کہا تھا کہ ان کے شوہر اشتیاق بیگ نے انہیں زہر  دیا  تھا۔  بقول  زوہیب  حسن اشتیاق بیگ  کی طرف سے کھانے میں کوئی مشکوک چیز  کھلانے کے بعد نازیہ بیضہ دانی کے کینسر میں  مبتلا  ہوگئیں۔  معروف  گلوکار  نے  کہا  کہ  اس  کینسر سے  وہ  صحتیاب  ہوئیں لیکن  بعد  میں  انہیں  پھیپھڑوں  کا کینسر ہوگیا۔

اچانک  21 سال  بعد  اس  بات  کو  سامنے  لانے  پر  زوہیب حسن  کا  کہنا  تھا  کہ  انہیں  نہیں  معلوم  تھا  کہ  مرنے  سے  پہلے  نازیہ حسن  برطانوی  پولیس  کو 10 صفحات کا بیان ریکارڈ کرواگئیں  تھیں۔  دس ماہ قبل والد کے انتقال پر  جب  انہوں نے  چیزوں کا جائزہ لیا تو بہن کے بیان کی کاپی ملی۔

یہ  بھی  پڑھیے

سینئر اداکارہ دردانہ بٹ کے انتقال پر فنکاروں کے تعزیتی پیغامات

نیوز360  نے سنگین  الزامات  پر اشتیاق بیگ  سے  ان کا  موقف  جاننے  کے  لیے  رابطہ  کیا  تو  انہوں  نے  بتایا  کہ اس  میں  کوئی  دو  رائے  نہیں  کہ  ان  کی  اور  نازیہ  حسن  کی  شادی  کوئی  کامیاب  شادی  نہیں  تھی  کیونکہ  ان  دونوں  کی شخصیات  ایک  دوسرے  سے  بالکل  الٹ  تھیں۔ اشتیاق بیگ  نے  بتایا  کہ  وہ  نازیہ  حسن  کو  ان  کی موت  سے 6   ماہ پہلے  ہی  طلاق  دے  چکے  تھے۔  زوہیب حسن  کے  الزامات  پر  انہوں  نے  کہا  کہ  وہ  تو  خود  نازیہ  کی  کمائی  پر  زندہ  تھے،  اسی  لیے  وہ  نازیہ  کی  مجھ  سے  تو  کیا  کسی  سے  بھی  شادی  نہیں  کرانا  چاہتے  تھے۔  مرزا  اشتیاق  بیگ  نے  کہا  کہ  وہ   ان  پر ایک  ارب  کا ہرجانہ دائر کریں  گے۔

اشتیاق  بیگ کے مطابق زوہیب حسن کی والدہ  منیزہ حسن ملزم ظاہر جعفرکی والدہ کی بہترین دوست ہیں جبکہ زوہیب حسن ظاہر جعفر کے دوست ہیں۔ ایسے وقت میں جب نور مقدم قتل کیس تیزی  سے  آگے  بڑھ  رہا  ہے  تو  نازیہ  حسن  کی  موت  کا پنڈورا باکس کھولنا نورمقدم کے کیس سے میڈیا کی توجہ ہٹانا ہے۔ حال ہی میں ظاہر جعفر کی والدہ کے ایک اور خاندانی دوست نے  بھی انہیں بچانے کے لیے کانفرنس منعقد کی تھی۔

یہاں  یہ  بات  قابل  ذکر  ہے  کہ  زوہیب  حسن  سے  پہلے  نازیہ  حسن  کی  والدہ  منیزہ  حسن  بھی  اشتیاق بیگ  پر ان  کی  بیٹی  کو  مارنے  کا  الزام  لگاچکی  ہیں۔

سوشل  میڈیا صارفین  کا  کہنا  ہے  کہ  21 سال  بعد  یہ  باتیں  سامنے  آنا  حیران  کن  ہے  تاہم  اگر  ایسا  کچھ  ہے  بھی  تو  اس  معاملے  کی  سچائی  جلد  سے  جلد سب  کے  سامنے  آنی  چاہیے۔

Facebook Comments Box