بھارتی ہدایتکار نے بالی ووڈ کے سیاہ پہلو کی جھلک دکھادی

وویک رنجن کے مطابق بالی  ووڈ  کی  تہہ اتنی تاریک ہے کہ عام آدمی کے لیے اس کا اندازہ لگانا ناممکن ہے۔

بالی ووڈ میں کئی سال گزارنے والے بھارتی ہدایتکار وویک رنجن اگنیہوتری سماجی  رابطوں  کی  ویب  سائٹ  ٹوئٹر  پر بھارتی فلم انڈسٹری کے سیاہ پہلو سب  کے  سامنے  لے  آئے۔

انڈین  اداکارائیں  تو  اکثر  بالی  ووڈ  کی تلخ  حقیقت سے  پردہ  اٹھاتی  ہیں  لیکن  اب  انڈین ہدایتکار  بھی  بھارتی  فلم  انڈسٹری  کے  تاریک  پہلوؤں  کے  بارے  میں  بات  کرنا شروع  ہوگئے  ہیں۔ ویویک  رنجن اگنیہوتری  نے  سماجی  رابطوں  کی  ویب  سائٹ  ٹوئٹر  پر بالی  ووڈ  کی  سچائی  سب  کے  سامنے  رکھ  دی۔ بھارتی  ہدایتکار نے  لکھا  کہ  جو  آپ  سب  کو  نظر  آتا  ہے  وہ  اصل  بالی  ووڈ  نہیں ہے، بالی  ووڈ  کی  تہہ اتنی تاریک ہے کہ عام آدمی کے لیے اس کا اندازہ لگانا ناممکن ہے۔

یہ  بھی  پڑھیے

ایک اور رئیلٹی شو کے فاتح کی موت

یہاں  بہت  سارے  خواب  بکھرے  ہوئے  ہیں،  ٹوٹے  ہوئے  ہیں،  روندے  ہوئے  ہیں۔  اگر  بالی  ووڈ ٹیلنٹ  کا  میوزیم  ہے  تو  یہ  ٹیلنٹ  کا  قبرستان  بھی  ہے۔  یہاں  جو  بھی  آتا  ہے  وہ  جانتا  ہے  کہ مسترد  کیا  جانا  اس  انڈسٹری  کی  عام  بات  ہے۔ انسان  کھانا  کھائے  بغیر  تو  زندہ  رہ  سکتا  ہے  لیکن  عزت  کے  بغیر  نہیں  کیونکہ  اس  کے  بنا  انسان  اپنی  قدر  کرنا چھوڑ  دیتا  ہے  جبکہ  امید  بھی  ختم  ہوجاتی  ہے۔

بھارتی  ہدایتکار  نے  یہ  بھی  کہا  کہ  بعض  اوقات  شہرت  اور  کامیابی اپنی  قیمت  مانگتی  ہیں۔  شوبز  انڈسٹری  میں  جگہ  بنانے  کے  لیے  آپ  کو  ایک  اسٹار  کی  طرح  دکھنا  پڑتا  ہے،  ایک  اسٹار  کی  طرح  پارٹی  کرنی  پڑتی  ہے،  لیکن  یہ  تمام  چیزیں  آپ  کو  اسٹار  نہیں  بناتیں۔

ویویک  رنجن  کے  مطابق  بہت  خوش  قسمت  ہوتے  ہیں  وہ  لوگ  جو  واپس  اپنے  گھر  کو  لوٹ  جاتے  ہیں کیونکہ  جو  یہاں  رہ  جاتے  ہیں  وہ  ٹوٹ  جاتے  ہیں۔ ان  میں  سے  اگر  کچھ  لوگ  تھوڑی  کامیابی  حاصل  کر  بھی  لیتے  ہیں  تو  وہ  حقیقت  نہیں  ہوتی، ایسے  لوگ  ڈرگز  اور  شراب  جیسی  زندگی  کو  تباہ  کرنے  والی  لتوں میں  پڑجاتے  ہیں۔ اور  ایسی  خراب  عادتوں  کے  لیے  انہیں  پیسہ چاہیئے  ہوتا  ہے  جس  کے  لیے  وہ  کچھ  بھی  کر  گزرنے کو تیار  ہوجاتے  ہیں۔

Facebook Comments Box