چھاتی کے سرطان کو شکست دینے والی بھارتی اداکارہ سوشل میڈیا کے رویے پر افسردہ

چھاتی کے سرطان میں چھاتی کاٹنا نہیں پڑتی؟اداکارہ چھوی متل کی انسٹاگرام پوسٹ پر سوشل میڈیا صارف کا غیر سنجیدہ تبصرہ، اداکارہ جواب میں طویل جذباتی پوسٹ لکھ ڈالی۔

چھاتی کے سرطان کو بہادری سے  شکست دینے والی بھارتی اداکارہ چھوی متل کو سوشل میڈیا صارفین کی غیرسنجیدگی نے دکھی کردیا۔

 گزشتہ  سال اپریل میں چھاتی کے سرطان میں مبتلا ہونے کے بعد کامیاب سرجری کے ذریعے موذی مرض کو شکست دینے والے بھارتی اداکارہ چھوی متل کو صحت یابی کے کئی ماہ بعد بھی  سوشل میڈیا پر ٹرولنگ اور پوچھ گچھ کا سامنا ہے۔

یہ بھی پڑھیے

48 سالہ ہریتک روشن نے سال نو پر اپنے 8پیکس دکھا کر پرستاروں کو حیران کردیا

انیل کپور کوسپراسٹار رنبیر کپور کی فلم اینیمل کا پوسٹر پسند آگیا

42سالہ اداکارہ انے حال ہی میں اپنی فیملی کے ساتھ دبئی کا دورہ کیا تھا۔اس دوران اداکارہ نے بکنی میں اپنی تصاویر سوشل میڈیا کی زینت بنائی تو صارفین نے تبصروں کے خانے میں چھاتی سے متعلق تبصروں کی بھرمار کردی۔

ایک صارف نے لکھا کہ”چھاتی کے سرطان میں چھاتی کاٹنا نہیں پڑتی؟“۔اس طرح کےناقدین کو مخاطب کرتے ہوئے اداکار ہ نے لکھا کہ” ہاں! اس بے حسی کا مظاہرہ اب بھی کیا جاتا ہے۔ میں نے حال ہی میں ساحل سمندر پر چھٹیاں گزارنے کی کچھ تصاویر اور ریلز پوسٹ کیں اور اس تبصرے نے مجھے اپنی طرف متوجہ کیا، میرے سینوں کی بات یہاں کسی شے کی طرح ہو رہی ہے۔‘‘

انہوں نے اپنی طویل پوسٹ میں لکھاکہ کیا میں یہ کہہ کر شروعات کر سکتا ہوں کہ میں چھاتی کے کینسر سے بچ جانے والی ہوں اور اس عضو کو زندہ اور اچھی حالت میں رکھنے کے لیے میں نے بہت جدوجہد کی ہے۔جب کہ میں اس مسئلے کے بارے میں تجسس کو پوری طرح سمجھتی ہوں، کیا آپ نہیں سوچتے کہ حساسیت کو نقصان نہیں پہنچے گا؟ یہ شخص یہ کہنے کی حد تک چلا گیا ہے کہ’مشہور لوگ ایسے تبصروں کے عادی ہیں‘۔

انہوں نے کہاکہ” مشہور لوگ بھی انسان ہیں، وہ عام انسانوں کی طرح جذبات رکھتے ہیں۔ انہیں عام انسانوں کی طرح کینسر ہو جاتا ہے، وہ عام انسانوں کی طرح زندہ رہتے ہیں یا دم توڑ دیتے ہیں۔نہیں، تو کوئی بھی بقا کی سب سے بڑی جنگ کے بارے میں اس طرح کے غیر حساس تبصروں کا عادی نہیں ہوتا جس کے جسمانی اور جذباتی اثرات زندگی بھر ہوتے ہیں نہیں“۔

انہوں نے مزید کہا کہ” خواتین کو یہ سمجھنے میں مدد کے لیے کہ چھاتی کے سرطان کی سرجری کیسے ہوتی ہے،بتاتی چلوں کہ میں lumpectomy کے مرحلے سے گزری ہوں جس میں صر ف گلٹی کوہٹایا جاتا ہے جبکہ Mastectomy میں کینسر کے پھیلاؤ کی وجہ سے پوری چھاتی کو نکال لیا جاتا ہے۔یہ سرجری کینسر کے تاخیری مراحل میں کی جاتی ہے “۔

انہوں نے کہاکہ”میں اس بات کا اعادہ کرنا چاہوں گی کہ کینسر سے بچنا میرے لیے زندگی کو بدلنے والا تجربہ رہا ہے۔ یہ ایک نئی زندگی ہے جو میں جی رہی ہوں اور یہ پچھلی زندگی جیسی نہیں ہے۔ 7 مہینے گزر چکے ہیں لیکن میں ابھی اس تکلیف کی وجہ سے روزجذباتی مراحل سے گزررہی ہوں جس کیلیے میرا کوئی قصور نہیں ہوتا ہے۔ لیکن مجھے یہ اعزاز حاصل ہے کہ میں ایک ایسے جسم کی مالک ہوں جو اس سب سے بچ گیا ہے اور دن بہ دن خوبصورت ہوتا جا رہا ہے“۔

متعلقہ تحاریر