کرپٹو کرنسی اسکینڈل میں وقار ذکا کے پھر ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری

وقار ذکا پیشہ ورانہ امور کے سلسلے میں امریکا میں ہیں،عدالت میں پیش نہیں ہوسکتے، وکیل کی حاضری سےا ستثنیٰ کی درخواست پر دلائل طلب

کراچی کی مقامی عدالت نے 8 کروڑ 60لاکھ روپے کے کرپٹوکرنسی اسکینڈل میں مبینہ طور پر ملوث اداکار اور سوشل میڈیا کی شخصیت وقار ذکا کے پھر ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کردیے۔

 وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے ) نے وقار ذکا کیخلاف  بینک اکاؤنٹ سے مبینہ طور پر ورچوئل کرنسی سے متعلق لین دین کی تحقیقات کے سلسلے میں   مقدمہ درج کررکھا ہے۔

یہ بھی پڑھیے

کرپٹو کرنسی اسکینڈل میں وقار ذکا کے پھر ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری

ٹی وی اینکر وقار ذکا چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کے دفاع میں سامنے آگئے

جب جوڈیشل مجسٹریٹ (شرقی) رمیش کمار نے گزشتہ روز کیس کی سماعت کی ایف آئی اے کے اسپیشل پبلک پراسیکیوٹر نے بیان درج کرایا کہ عدالت کی جانب سے 22 دسمبر 2022 کو جاری کیے گئے وارنٹ گرفتاری پر عمل نہیں کیا جاسکا کیونکہ ملزم  کے ٹھکانے کا علم نہیں تھا۔

بعد ازاں ایڈووکیٹ صلاح الدین پنہور پیش ہوئے اورملزم کا دستخط شدہ اور نیویارک میں پاکستانی مشن سے تصدقی شدہ وکالت  نامہ جمع کرایا۔وکیل نے ایک درخواست بھی دائر کی جس میں یہ استدعا کی گئی کہ ان کا مؤکل عدالت میں پیش نہیں ہو سکتا کیونکہ وہ امریکا میں پیشہ ورانہ اسائنمنٹ پر تھا۔

وکیل نے ملزم کی ایک دن کی حاضری سے استثنیٰ کی درخواست بھی کی تاہم عدالت نے قرار دیا کہ ملزم  نہ تو عدالت میں پیش ہوا  اور نہ ہی اس نے مجاز عدالت سے ضمانت کی درخواست کی۔

عدالت نے  وکیل سے کہا کہ وہ اپنے مؤکل کی عدم حاضری سے متعلق درخواست کے قابل سماعت ہونے پرپیشگی دلائل دیں اور سماعت 19 جنوری تک ملتوی کردی۔

متعلقہ تحاریر