حضوری باغ میں کرونا ویکسین کی آڑ میں موج میلہ؟

تقریب میں موجود متعدد فنکاروں نے کرونا ایس او پیز کی خلاف ورزی کی۔

ملک میں ایک طرف کرونا کی وباء کے کیسز میں اضافہ ہوتا جارہا ہے تو دوسری جانب حضوری باغ میں فنکاروں کی ویکسین لگانے کی تقریب میں تمام افراد ایس او پیز کی خلاف ورزی کرتے نظر آئے ہیں۔

پاکستان میں کرونا کی وباء کے کیسز میں اضافہ دیکھا جارہا ہے۔ اس وجہ سے حکومت نے لاک ڈاؤن بھی سخت کردیا ہے لیکن ہمارے فنکار وباء کی سنگینی کو سمجھنے سے قاصر ہیں۔ پاکستان کے صوبہ پنجاب کے شہر لاہور میں موجود مشہور حضوری باغ میں فنکاروں کو ویکسین لگانے کی تقریب منعقد کی گئی۔ شوبز انڈسٹری کی معروف شخصیات نے تقریب میں شرکت کی۔

گلوکار فاخر، اداکار یوسف کمال عرف شکیل، فیصل قریشی اور عدنان جیلانی سمیت مختلف فنکار کرونا سے بچاؤ کی ویکسین لگانے حضوری باغ پہنچے لیکن حیران کن طور پر کسی نے بھی کرونا سے بچاؤ کی ایس او پیز پر عمل نہیں کیا۔ سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر میزبان فرح سعدیہ نے ویڈیو شیئر کی تو سوشل میڈیا صارفین نے تنقید کا نشانہ بنایا۔

یہ بھی پڑھیے

عروہ حسین پر کرونا سے صحتیابی پر بھی تنقید

ایک صارفہ نے لکھا کہ تقریب میں بیٹھا ہر فنکار کرونا سے بچاؤ کی ویکسین کی بات کررہا ہے مگر کسی ایک شخص نے بھی ماسک نہیں پہنا۔ ویکسین لگانے کا ہر گز یہ مطلب نہیں ہوتا کہ آپ کرونا کی وباء کا شکار نہیں ہوسکتے ہیں۔ انہوں نے اپنی مثال دیتے ہوئے بتایا کہ وہ امریکا میں موجود ہیں اور ویکسین کی دونوں خوراکیں لینے کے باوجود بھی ماسک کی پابندی کرتی ہیں۔

ایک اور صارف نے طنزیہ انداز اپناتے ہوئے لکھا کہ صرف غریب افراد بس میں سفر نہیں کرسکتے کیونکہ اس سے کرونا پھیلتا ہے لیکن امیر طبقے کو ہر کام کرنے کی اجازت حاصل ہے۔

مختلف ٹوئٹر صارفین نے ویڈیو پر تبصرے کرتے ہوئے اسے کرونا ویکسین کے آڑ میں موج میلہ قرار دیا ہے۔

متعلقہ تحاریر