کیا کرونا کی دو الگ ویکسینز لگائی جاسکتی ہیں؟

ڈاکٹر سنجے کا کہنا ہے کہ ویکسینز کی ملاوٹ بغیر کسی سائنسی نقطہ نظر کے نہیں کی جانی چاہیے۔

کرونا  سے  بچاؤ  کی  ویکسین  لگانے  کا  عمل  پوری  دنیا  میں  جاری  ہے۔  اس حوالے  سے  ویکسین  لگوانے  والے  شہریوں  کے  دماغ  میں متعدد  سوالات  جنم  لے  رہے  ہیں۔  ایک  اہم  سوال  یہ  ہے کہ  کیا ویکسین  کی  پہلی اور  دوسری  خوراک  کے مختلف  برانڈز  ہونے سے کوئی  فرق  پڑتا  ہے؟ بھارتی  ڈاکٹر  نے مضر اثرات  اور افادیت  کے  حوالے  سے  معلومات  فراہم  کردی۔

بھارتی  اخبار  دی  انڈین  ایکسپریس کی  رپورٹ  میں  ماہر  ڈاکٹر  سنجے  پجاری  سے  کرونا  ویکسین  سے  متعلق  اہم  سوالات کیے گئے۔  انڈیا  میں نوجوان  خواتین  میں  ایسٹرازینیکا  ویکسین  کے  مضر  اثرات  کے  حوالے  سے  بحث  چھڑی  تو متعدد  پہلو  سامنے آئے۔ ڈاکٹر  سنجے  پجاری  نے  بتایا  کہ  کئی ممالک  میں  ایسٹرا زینیکا کے بجائے دو  مختلف برانڈز کی ویکسینیں لگانے کو بہتر  آپشن  قرار  دیا جاتا  ہے۔

ڈاکٹر  سنجے  کے  مطابق ایبولا ، ملیریا اور ڈینگی جیسی  بیماریوں  کو  ٹھیک  کرنے کے لیے دو  مختلف  برانڈز  کی  ویکسینز لگانے  کی  مشق  کی  گئی ،  حکمت عملی ابھی کلینیکل ٹرائل  کے مرحلے میں ہے۔

یہ  بھی  پڑھیے

کلفٹن ڈرائیو تھرو ویکسین سینٹر پر عوام کا رش

رپورٹ  کے  مطابق ایسٹرا زینیکا سمیت کوویڈ 19 کی دو  الگ ویکسینز کو لگانا  زیادہ  محفوظ  ہے۔ ایک تحقیق  میں مریضوں کو کوویشیلڈ کی 2 خوراکیں اور کوویکسین کی دو خوراکیں لگائی گئیں  اور  بہترین  نتائج  سامنے آئے۔  یہ  تحقیق  جلد  ہی کرونا  سے  متعلق  جریدے  میں  شائع  کی  جائے گی۔ ابتدائی  نتائج  کے  مطابق  ویکسین  کے  بحران  کے  وقت  دو  مختلف  برانڈز  کی  ویکسینز لگانے  میں  حرج  نہیں  ہے۔

ڈاکٹر  سنجے  نے  بتایا  کہ مغربی  ممالک  میں  اگر  کسی  مریض  کو کسی  ایک  ویکسین  کی  پہلی  خوراک  نہیں  چلتی  تو  اسے  کسی  بھی  دوسرے  برانڈ  کی  ویکسین  لگانے  کی  ہدایت  کردی  جاتی  ہے۔  تاہم  انہوں  نے  واضح  کیا  کہ  ویکسینز کی ملاوٹ بغیر کسی سائنسی نقطہ نظر کے نہیں کی جانی چاہیے۔

اسی طرح کے  سوالات ان  پاکستانی  شہریوں  کے  ذہنوں  میں  بھی  گردش  کررہے  ہیں  جو ویکسین  لگوانے  کے  لیے ویکسینیشن مراکز کا  رخ  کررہے  ہیں کیونکہ  بعض  اوقات  مرکز  پر  پہنچنے  کے  بعد  پہلے  لگائی  جانے  والی  ویکسین  اس  وقت میسر  نہیں  ہوتی۔

Facebook Comments Box