سکھر: سیپکو  نے غریب صارفین کا جینا دوبھر کردیا

سیپکو کے اعلیٰ افسران بھی سیپکو سب ڈویژن ون کے افسران کے  آگے بے بس

سکھر الیکٹرک پاورکمپنی  سیپکو سب ڈویژن ون نے غریب بجلی صارفین  کی زندگی اجیرن کردی ، اپنی کوتاہی چھپانے کے لئے کئی ماہ پہلے لگائی جانے والی ڈیڈکشن کو  ختم کرنے اور ریلیف دینے کے بجائے زبردستی غریب صارفین کو بل ادا کرنے پر مجبور کردیا،  بل  کی ادائیگی کی تاریخ ہونے  کے باوجود غریب صارفین کی بجلی منقطع کرکے ذہنی اذیت میں مبتلا کردیا۔

سکھر الیکٹرک پاورکمپنی  کے اعلیٰ افسران بھی سیپکو سب ڈویژن ون کے افسران کے  آگے بے بس، صارفین کو ریلیف فراہم کرنے کے بجائے انہیں اذیت میں مبتلا کرنا سیپکو سب ڈویژن ون کا وطیرہ بن گیا۔

یہ بھی پڑھیے

سکھر انتظامیہ گھروں کی بجائے اسکولوں میں ویکسینیشن کرنے لگی

ایف آئی اے سکھر کی کارروائی، تین جعلی ویکسینیٹر گرفتار

تفصیلات کے مطابق سیپکو کے اعلیٰ افسران کو خوش کرنے کے لئے سیپکو سب ڈویژن ون کے  افسران نے نیا طریقہ اپنا لیا ہے، ٹکر محلہ کے غریب گھرانوں سے وابستہ بجلی صارفین کے  گزشتہ کئی ماہ کی ڈیڈکشن کو انکوائری کے ذریعے ختم  کرانے کے بجائے اپنی کارکردگی دکھانے کے لئے صارفین کی بجلی منقطع کرنا شروع کردی ہے۔

سکھر کے ٹکر محلہ کے صارفین کا کہنا ہے کہ گزشتہ برس میں سیپکو سب ڈویژن ون کے صارفین کی جانب سے ڈیڈکشن لگائی گئی تھی، متعدد بار سیپکو افسران کے دفاتر کے چکر کاٹتے رہے لیکن ڈیڈکشن کو ختم نہیں کیا گیا، صارفین کا کہنا تھا کہ کئی بڑے بجلی صارفین کو ڈیڈکشن اور لاکھوں روپے بل ماہانہ ہونے کے باوجود ان کی بجلی منقطع نہیں کی جاتی  جبکہ جن کا  ماہانہ بل سات سو روپے سے 15 سو روپے  آتا ہے ان کی بجلی تاریخ آنے سے قبل ہی منقطع کرکے  سیپکو سب ڈویژن ون کے افسران ڈیڈکشن کے  بلوں کی ادائیگی  پر مجبور کررہے ہیں۔

جبکہ سیپکو کے اعلیٰ افسران بھی سیپکو سب ڈویژن ون کی  مانیوں پر نوٹس لینے کو تیار نہیں، صارفین کا کہنا  ہے کہ  بلاجواز لگائی گئی ڈیڈکشن کو ختم کرانے کےلئے سیپکو سب ڈویژن ون کے افسران سنجیدگی اختیار نہیںکررہے ہیں  بلکہ ان کے گھروں کی بجلی  منقطع کرکے انہیں کئی کئی روز بجلی کے بغیر گذر بسر کرنے پر مجبورکردیا گیا ہے اور ا پنی من مانیوں پر بل کی ادائیگی کے تقاضے کو برقرار رکھا جاتا ہے۔

صارفین  نے مطالبہ کیا ہے کہ سیپکو سب ڈویژن ون کے افسران کی ناانصافیوں کا نوٹس لیتے ہوئے  بجلی صارفین کو سہولیات فراہم کرنے سمیت انہیں ذہنی اذیت میں مبتلا ہونے سے بچایا جائے بصورت دیگر احتجاج کا راستہ اختیار کرنے  پر مجبور ہوجائیں گے۔

دوسری جانب سیپکو سب ڈویژن ون  کے ایکسیئن امیر بخش سے موقف معلوم کرنے کے لئے رابطہ کیا گیا تو ان کا کہنا  تھا کہ  جن افراد کو  شکایات ہیں، وہ صارفین ان کے دفتر شکایات جمع کرائیں، انکوائری اور تحقیقات کے بعد ان کی شکایات کو دور کیا جائے گا، تاہم سیپکو سب ڈویژن ون کے افسران کی جانب سے  من مانیوں کی بھی تحقیقات کرائی جائے گی

Facebook Comments Box