ادویات کی قیمتوں میں 200 فیصد اضافے کا خدشہ ہے، شیری رحمان

رہنما پی پی پی کا کہنا ہے منی بجٹ کے منفی اثرات ابھی سے آنا شروع ہو گئے ہیں۔

پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کی نائب صدر سینیٹر شیری رحمان نے ایک بیان میں کہا ہے کہ وہ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 5 سے 6 روپے اضافے کی سمری کو مسترد کرتی ہیں۔ حکومتی نمائندے اگر عوام کے ہمدرد ہیں تو اوگرا کی سمری مسترد کر دیں۔

شیری رحمان نے کہا کہ غریب عوام کمر توڑ مہنگائی کی وجہ سے دو وقت کی روٹی کے لئے پریشان ہیں جبکہ حکومت ہر 15 دن بعد پیٹرول کی قیمتوں میں اضافے کرکے مہنگائی بڑھا رہی ہے۔

یہ بھی پڑھیے

پی ٹی آئی میں مخصوص لابی کو آگے لایا جارہا ہے، عامر لیاقت حسین

وزیراعظم کے خلاف تحریک عدم اعتماد، کیا پی ڈی ایم  کا نیا شوشہ ہے؟

ان کا کہنا تھاکہ اداریہ شماریات کے مطابق کم آمدنی والے طبقے کے لئے مہنگائی کی شرح 20.89 فیصد ہوچکی ہے۔ منی بجٹ سے پہلے ہی 16 اشیاء کی قیمتوں میں اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے، پیٹرول کی قیمتوں میں اضافے سے کم آمدنی والے طبقے پر شدید دباؤ پڑے گا، پیٹرول کی قیمتوں میں اضافے کو ہر شہری مسترد کرے گا۔

پاکستان پیپلز پارٹی سینیٹر شیری رحمان

شیری رحمان کا کہنا تھاکہ منی بجٹ کے بعد ادویات کی قیمتوں میں 200 فیصد اضافے کا خدشہ ہے، اس اضافے سے فائدہ اٹھانے کے خاطر مافیا نے مارکیٹ سے ادویات غائب کر دی ہیں۔

انہوں نے استفسار کیا کہ ادوات کے اس مصنوعی بحران سے نمٹنے کے لئے حکومت کیا اقدامات کر رہی؟ شیری رحمان نے کہا کہ منی بجٹ کے منفی اثرات ابھی سے آنا شروع ہو گئے ہیں۔

Facebook Comments Box