عالمی ادارہ صحت نے  کرونا کے دو نئے طریقہ علاج کی منظوری دے دی

عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) نے  کرونا کے دو نئے  طریقہ علاج کی منظوری دے دی. ویکسین کے ساتھ ساتھ دیگر دواؤں کے استعمال سے وائرس کاشکار افراد کو شدید بیماری اور موت سے بچایا جاسکے گا۔

یہ خبر اس وقت سامنے آئی ہے جب کرونا کی نئی قسم اومی کرون  کے باعث دنیا بھر میں اسپتالوں پر دباؤ بڑھ رہا ہے۔عالمی ادارہ صحت کی پیشگوئی کے مطابق مارچ تک نصف یورپ اومی کرون سے متاثر ہوچکا ہوگا۔

یہ بھی پڑھیے

سندھ کورونا ٹاسک فورس کا صوبے بھر میں تعلیمی ادارے کھلے رکھنے کا فیصلہ

کراچی کے لیے بری خبر، شہر میں کووڈ 19 مثبت کیسز کی شرح 35 فیصد سے تجاوز

 

برٹش میڈیکل جرنل میں شائع ہونے والی  سفارشات میں  ڈبلیو ایچ او کے ماہرین نے کہا کہ کرونا سے شدید بیمارمریضوں کے علاج کے لیے  جوڑوں کے درد (اتھرائٹس)کی دوا بیریسٹینب(Baricitinib)   کو کورٹیکواسٹیرائیڈز(Corticosteroids) کے ساتھ استعمال کیا جاتا ہے جس سےمریض کے  زندہ رہنے کی شرح بہتر ہوتی ہے اور وینٹی لیٹرز تک جانے کی ضرورت کم  پیش آتی ہے۔

ماہرین نے کرونا کے ایسے مریضوں کے لیے مصنوعی اینٹی باڈی ٹریٹمنٹ( Sotrovimab )کی بھی سفارش کی جن کا مرض شدید نوعیت کا نہیں ہوتالیکن  بڑھاپے ،ذیابیطس اور کمزور دفاعی نظام کے باعث ان  کے اسپتال منتقل ہونے کا زیادہ خطرہ  ہوتا ہے

اسپتال میں داخل ہونے کے خطرے سے دوچار مریضوں کے لیے مصنوعی اینٹی باڈی ٹریٹمنٹ کو غیر معمولی کارگرپایا گیا ہے۔تاہم  ڈبلیو ایچ او نے کہا کہ اومی کرون جیسیی نئی اقسام کے خلاف ( Sotrovimab )کی تاثیر ابھی تک غیر یقینی ہے۔

ڈبلیو ایچ او نے سمتبر 2020 میں کرونا کے علاج کے لیے کورٹیکو اسٹرائیڈز کے ساتھ شروع ہونے والے صرف 3 طریقوں کی ہی منظوری دی تھی۔ کورٹیکواسٹیرائیڈز سستے ہونے کے ساتھ ساتھ  وسیع پیمانے پر دستیاب ہیں اور سنگین نوعیت کی سوزش سے بچاؤ کیلیے استعمال ہوتے ہیں۔

جوڑوں کے درد کی دوائیں tocilizumab اور sarilumab  جن کی عالمی ادارہ صحت نے جولائی میں توثیق کی تھی، IL-6  کو روکنے کی صلاحیت رکھتی ہیں جو کروناوائرس کے خلاف مدافعتی نظام کے خطرناک حد سے زیادہ ردعمل کو دباتے ہیں۔

مصنوعی اینٹی باڈی علاج Regeneron کو عالمی ادارہ صحت نے ستمبر میں منظور کیا تھا اور گائیڈ لائنز کے مطابق Sotrovimab کو اسی قسم کے مریضوں کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے۔ڈبلیو ایچ او کی کرونا علاج کی سفارشات کلینیکل ٹرائلز کے نئے ڈیٹا کی بنیاد پر باقاعدگی سے اپ ڈیٹ کی جاتی ہیں۔

Facebook Comments Box