سابق چیئرمین ایف بی آر نے زرعی ٹیکس نظام پر سوالات اٹھا دیئے

سابق چیئرمین ایف بی آر شبر زیدی نے کہا ہے کہ قائداعظم محمد علی جناح ٹیکس دینے والے سب سے بڑے وکیل تھے۔

ملک میں موجودہ ٹیکس نظام پر تنقید کرتے ہوئے فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کے سابق چیئرمین شبر زیدی نے اراکین پارلیمنٹ کے زرعی انکم ٹیکس کی ادائیگی کو شرمناک، قابل رحم اور خطرناک قرار دیا۔

شبر زیدی نے ٹیکس کے موجودہ نظام پر سنگین سوالات اٹھاتے ہوئے کہا ہے کہ اگر ارکان پارلیمنٹ کی اکثریت حکومت سے ملنے والی تنخواہوں کے علاوہ ٹیکس ادا نہیں کرتی تو اس میں کوئی اصلاحات کیسے ہو سکتی ہیں۔

یہ بھی پڑھیے

ایلون مسک نے ایک دن میں 33 ارب ڈالر کما لیے

کراچی والوں کو بجلی کا ایک اور جھٹکا، فی یونٹ 1 روپیہ 7 پیسے مزید مہنگا

صورتحال کی سنگینی کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی)، پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی)، پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل-این)، متحدہ قومی موومنٹ (پی ایم ایل-این) کے بیشتر ایم این ایز اور سینیٹرز۔ ایم کیو ایم) اور جمعیت علمائے اسلام (جے یو آئی) کے ایم این ایز یا سینیٹرز نے اپنی تنخواہوں کے روکنے جانے کے خوف سے کوئی دوسرا ٹیکس ادا نہیں کیا ہے۔

سابق چیئرمین ایف بی آر شبر زیدی نے کہا کہ قائداعظم محمد علی جناح ٹیکس دینے والے سب سے بڑے وکیل تھے۔

سماجی رابطون کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر پیغام جاری کرتے ہوئے انہوں نے کہا ہے کہ "اس وقت آمدن پر شرح ٹیکس 15 فیصد ہے تو اس طریقے سے پاکستان میں ترقی اور استحکام کیوں کر آسکتا ہے۔

انہوں نے مزید کہا ہے کہ "زرعی انکم ٹیکس ایک صوبائی موضوع ہے، سوائے 35 کیسز کے،ادا کیا گیا ٹیکس ان افراد کی طرز زندگی سے مطابقت نہیں رکھتا۔ انہوں نے سوال اٹھایا کہ کیا یہ قابل قبول ہے؟

ایف بی آر کے سابق چیئرمین کا کہنا تھا کہ یہی وجہ تھی کہ انہوں نے کمپیوٹرائزڈ قومی شناختی کارڈ (سی این آئی سی) استعمال میں لانے کی کوشش کی لیکن ناکام رہے۔

شبر زیدی نے وزیر اعظم عمران خان کی حکومت میں 10 مئی 2019 سے 6 جنوری 2020 تک ایف بی آر کے چیئرمین کے طور پر خدمات انجام دیں تھیں۔

Facebook Comments Box