سلوواکیہ کی کمپنی نے اڑنے والی ٹیکسی بنالی

ٹیکسی میں چار مسافروں کے بیٹھنے کی گنجائش ہے، 2027 میں لانچ کی جائے گی، زمین پر چلنے کے ساتھ ساتھ فضا میں اڑ سکے گی۔

سلوواکیہ کی انجینیئرنگ کمپنی نے دنیا کی پہلی اڑنے والی ٹیکسی تیار کرلی ہے جس میں چار افراد کے بیٹھنے کی گنجائش ہے اور یہ اگلے 5 سال میں قابل استعمال ہوگی۔

یہ ٹیکسی آدھی سپر کار اور آدھی اڑنے والی گاڑی کے ڈیزائن میں ہے جسے 2027 میں لانچ کیا جائے گا۔

یہ گاڑی تین منٹ میں اپنی حیئیت تبدیل کرسکتی ہے، کمپنی کے مطابق اس فضائی سفر کی سروس کے ذریعے 100 سے 500 میل کی مسافت پر موجود شہروں کے درمیان سفر میں بہت وقت بچ جائے گا۔

مسافر سنگل سیٹ پر دروازے کے ساتھ ہی بیٹھیں گے اور سفر کے دوران وہ کام کرسکتے ہیں، آرام کرسکتے ہیں، کھیل بھی سکتے ہیں اور صرف منظر سے لطف اندوز بھی ہوسکتے ہیں۔

فی الحال اس اڑنے والی ٹیکسی کے کرائے کے متعلق کوئی تفصیلات نہیں بتائی گئی ہیں۔

سلوواکیہ کی کمپنی اب ایک اڑنے والی گاڑی پر کام کر رہی ہے جسے جون 2017 میں انٹرنیشنل پیرس ایئر شو میں نمائش کیلیے پیش کیا گیا تھا۔

یہ دو مسافروں کے گنجائش والی گاڑی ہے جو کہ 223 کلومیٹر فی گھنٹے کی رفتار سے اڑ سکتی ہے جبکہ سڑک پر اس کی رفتار 160 کلومیٹر فی گھنٹہ ہے۔

کمپنی کی طرف سے امکان ظاہر کیا گیا ہے کہ فضائی ٹیکسی سروس کے ذریعے ایک سال میں صرف شمالی امریکہ سے 70 ارب ڈالر کا منافع ہوسکتا ہے۔

متعلقہ تحاریر