اپرچترال: جہیز مانگنے والوں کے سماجی بائیکاٹ کا اعلان

لڑکی والوں سے جہیز کے مد میں کوئی مطالبہ نہیں ہوگا اور لڑکے سے بھی بندوق یا پیسے نہیں مانگے جائیں گے

اپرچترال میں گاؤں کے بزرگوں نے شادی کےموقع پر جہیز کی لعنت کے خلاف   ایک بڑا اور قابل تحسین قدم اٹھایا ہے جرگہ نے  شادی بیاہ میں جہیز کا بائیکاٹ اور غیرضروری رسومات پر پابندی لگانے کا  فیصلہ کیا ہے۔

اپر چترال کے لاسپور گاؤں کے بارہ دیہات کے قائدین کی جانب سے جرگہ میں غیرضروری رواج ختم کرنے پر اتفاق کیا گیا، بزرگوں نے جرگے میں متفقہ  طور پر ایک قرار دار منظور کی ہے جس کے مطابق شادی کے موقع پر لڑکی والوں سے  جہیز کے مد میں کوئی  مطالبہ نہیں ہوگا اور لڑکے سے بھی رواج کے مطابق بندوق یا پیسے نہیں مانگے جائیں گے۔

یہ بھی پڑھیے

مہنگے لہنگے بیچ کر جہیز مخالف مہم پر علی ذیشان پر تنقید

ناصر خان جان کی سوشل میڈیا پر دلچسپ پیشکش

قرار داد میں کہا گیا کہ مہنگائی کی وجہ سے بہت سی بیٹیوں کی رخصتی نہیں پاتی اس لئے ان رسومات سے بائیکاٹ کرتے ہیں ،، دعوت میں کھانوں پر کم سے کم خرچہ کیا جائے گا ، اور شادی بیاہ پر فضول خرچی سے گریز کیا جائے گا ۔

گاؤں کے مشران نے جہیزکی لعنت مانگنے والوں سے سماجی بائیکاٹ کا بھی اعلان کیا اور ساتھ ہی قرارداد پر عمل درآمد کے لئے ضلعی انتظامیہ سے تعاون کی اپیل کی ہے.

متعلقہ تحاریر