کیمبرج امتحانات ملتوی ہونے سے طلباءکا سال ضائع ہونے کا خدشہ

مارچ میں او لیول کے امتحانات ملتوی ہونے سے اگست میں طلباء نئی کلاسز میں داخلے  کے اہل نہیں رہیں گے کیونکہ اب امتحانات اکتوبر اور نومبر ہوں گے۔

پاکستان کے وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود کے ملک بھر میں امتحانات ملتوی کرنے کے اعلان کے ساتھ ہی کیمبرج کے امتحانات بھی ملتوی کردیے گئے ہیں۔ تاہم امتحانات ملتوی ہونے سے طلباء کی مشکلات میں کئی گنا اضافہ ہوجائے گا اور ان کا سال ضائع ہونے کا بھی خدشہ ہے۔

وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود کے امتحانات ملتوی کرنے کے اعلان کا مطلب ہے کہ اب او اور اے لیولز کے امتحانات اکتوبر اور نومبر میں ہوں گے۔ اے ٹو لیول کے امتحانات اپنے طے شدہ طریقے کے مطابق ہوں گے کیونکہ اے ٹو لیول کے بچوں کو ملک سے باہر کی یونیورسٹیز میں بھی داخلے کے لیے درخواستیں دینا ہوں گی۔

یہ بھی پڑھیے

کیمبرج امتحانات کی منسوخی کے طلباء کے مستقبل پر اثرات؟

سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ جن طلباء کو او لیولز کے امتحانات دینے تھے ان کا کیا ہوگا؟ کیونکہ او لیول کے بچوں کے امتحانات مارچ میں منعقد ہوتے ہیں جس کے بعد کئی طلباء کو دوسرے اسکولز میں جانا ہوتا ہے۔

کیمبرج امتحانات ملتوی
SAMAA

مثال کے طور پر او لیولز اسکول میں زیرتعلیم کسی طالب علم کو اے لیولز کے اسکول میں جانا ہے اور طالب علم کا عارضی طور پر پچھلے نتائج کی بنیاد پر داخلہ بھی ہوچکا ہے لیکن وہ اپنی کلاسز اگست سے لینا شروع نہیں کر پائے گا۔ کیونکہ او لیولز کے امتحانات اب اکتوبر اور نومبر میں ہوں گے جس کی وجہ سے اکتوبر یا نومبر میں امتحانات دینے والا طالب علم اگست میں اپنی کلاسز شروع نہیں کرسکے گا۔ اور کر بھی لے تو وہ کورس چند ماہ کے عرصے میں کیسے کور کر پائے گا۔ یہ مسئلہ کسی ایک طالبعلم کے ساتھ نہیں بلکہ سیکڑوں طلباء کو درپیش ہوگا۔

وفاقی حکومت کے فیصلے کے بعد اب اے لیولز کی کلاسز اگست سے نہیں بلکہ جنوری سے شروع ہوں گی۔ جن طلباء کی کلاسز جنوری سے شروع ہونی ہیں ان کے لیے 5 سے 6 ماہ میں نصاب مکمل کرنا بہت مشکل ہوگا۔

امتحانات ملتوی ہونے کے اثرات

وفاقی حکومت کے امتحانات ملتوی کرنے کے فیصلے سے ایک بات طے ہے کہ بچوں کا ایک سال یا کم از کم ایک سیمسٹر ضرور ضائع ہوگا۔

پاکستان کے صوبہ سندھ کے دارالحکومت کراچی کے سماجی کارکن اور سندھ ہائی کورٹ میں کیمبرج کے طلباء کے وکیل جبران ناصر نے کرونا کی وباء کی بگڑتی ہوئی صورتحال میں طلباء کی جانب سے امتحانات ملتوی کرانے کے مقدمے کی پیروی کی تھی۔

ایک طرف جبران ناصر طلباء کے لیے امتحانات ملتوی کرنے سے متعلق مقدمہ لڑ رہے ہیں تو دوسری جانب ان کی اہلیہ منشا پاشا مختلف محفلوں میں شرکت کرتی دکھائی دے رہی ہیں جہاں کرونا سے بچاؤ کی ایس او پیز کا بھی خیال نہیں رکھا جارہا ہے۔

کیمبرج امتحانات ملتوی

حالیہ دنوں میں منشا پاشا نے پاکستانی اداکار فہد مرزا کی سالگرہ میں بھی شرکت کی تھی جہاں مہمانوں کی کثیر تعداد موجود تھی۔ تقریب میں کرونا سے بچاؤ کے لیے احتیاطی تدابیر نظر انداز کی گئیں تھں۔ اس سالگرہ کی ایک تصویر بھی وائرل ہورہی ہے جس میں دیکھا جاسکتا ہے کہ سیلفی لینے والی خاتون اور پیچھے بیٹھے مہمانوں میں سے جبران ناصر کی اہلیہ منشا پاشا کے علاوہ چند لوگوں نے ہی ماسک پہن رکھا تھا اور مہمانوں کے درمیان سماجی فاصلے کا بھی فقدان تھا۔

متعلقہ تحاریر