کرپشن کے الزامات پر سعودی عرب کے سفیر معطل، عملہ وطن طلب

وزیراعظم عمران خان نے سابق سفیر اور سفارتکاروں کے خلاف تحقیقات کا حکم دیتے ہوئے 15 روز میں رپورٹ طلب کرلی ہے۔

وزیراعظم پاکستان عمران خان نے کرپشن الزامات اور سعودی عرب میں مقیم پاکستانی مزدوروں کی شکایات پر راجہ علی اعجاز کو سعودی سفیر کے عہدے سے معطل کردیا ہے۔ جبکہ سعودی عرب میں پاکستانی سفارت خانے اور قونصل خانوں میں تعینات 6 سفارتکاروں کو وطن واپس بلا لیا گیا ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے سعودی عرب میں تعینات سابق سفیر اور سفارتکاروں کے خلاف تحقیقات کا بھی حکم دیا ہے۔ وزیراعظم نے تحقیقاتی ٹیم کو حکم دیا ہے کہ وہ اس معاملے کی باریک بینی سے جانچ کریں اور 15 روز میں اپنی رپورٹ پیش کریں۔

عمران خان نے کہا کہ ان کے علم میں یہ بات آئی تھی کہ سعودی عرب میں تعینات سفارتی عملہ وہاں مقیم پاکستانی مزدورں کے مسائل حل کرنے میں دلچسپی نہیں لے رہا تھا۔

یہ بھی پڑھیے

الجزیرہ سروے میں وزیراعظم عمران خان پرسنیلٹی آف دا ویک

وزیراعظم عمران خان نے دیگر عرب ممالک میں تعینات سفارتی عملے کی کارکردگی کی بھی مذمت کی ہے۔ انہوں نے بیرون ممالک میں مقیم محنت کش طبقے کو خصوصی افراد قرار دیا ہے جو سخت محنت کر کے اپنے خاندانوں کی مالی معاونت کرتے ہیں۔

اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے جاری کردہ اعدادوشمار کے مطابق جولائی 2020 سے مارچ 2021 تک وصول ہونے ترسیلات زر کا ایک بڑا حصہ سعودی عرب سے بھیجا گیا تھا جس کا حجم تقریباً 5 ارب 70 کروڑ ڈالرز بنتا ہے۔

سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر پاکستان کی مشہور صحافی شفاء یوسفزئی نے وزیراعظم عمران خان کے اقدام کو سراہا ہے۔

ادھر لیفٹیننٹ جنرل (ر) بلال اکبر نے سعودی عرب میں پاکستان کے نئے سفیر کے طور پر ذمہ داریاں سنبھال لی ہیں۔

سعودیہ سفیر معطل
UrduNews

جمعرات کے روز لیفٹیننٹ جنرل (ر) بلال اکبر نے سعودی دفتر خارجہ کے پروٹوکول چیف مشاری بن الی بن نہیت سے ملاقات کی ہے اور اپنی اسناد سفارت جمع کروائیں ہیں۔

متعلقہ تحاریر