انعامی رقم کا طلبگار جواری احتجاج پر مجبور

سانگھڑ کے جبہ نامی نوجوان نے جوئے کا انعام نہ ملنے پر پریس کلب پہنچ کر اپنی نوعیت کا پہلا احتجاج ریکارڈ کروایا ہے۔

پاکستان کے صوبہ سندھ کے شہر سانگھڑ میں ایک نوجوان نے جوئے کا انعام نہ ملنے پر پریس کلب کے باہر پہنچ کر احتجاج کیا ہے۔

جبہ نامی نوجوان نے 100 روپے کی پرچی کٹوائی تھی جس پر 8 ہزار روپے کا انعام لگا تھا۔ نومی نامی آکڑا پرچی جواء ڈیلر نے پرچی پھاڑ کر انعام دینے سے انکار کردیا تھا۔ متاثرہ نوجوان نے جوئے کا انعام نہ ملنے پر رات گئے پریس کلب پہنچ کر اپنی نوعیت کا پہلا احتجاج ریکارڈ کروایا ہے۔

یہ بھی پڑھیے

کراچی میں کرونا سینٹر کا عملہ غائب، عوام پریشان

نوجوان جبہ کا کہنا ہے کہ روزانہ جوئے کی پرچی کٹوا کٹوا کر تھک گیا ہوں۔ قسمت سے 8 ہزار روپے انعام لگا ہے لیکن انعامی رقم نہیں مل سکی۔

دلبرداشتہ نوجوان نے پولیس سے مطالبہ کیا ہے کہ انہیں انعام کی رقم دلوائی جائے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ سانگھڑ میں پولیس کی سرپرستی میں مختلف مقامات پر جوئے کے اڈے دکانوں کی شکل میں کھلے ہوئے ہیں مگر پولیس خاموش تماشائی کا کردار ادا کررہی ہے۔ ہزاروں گھر تباہ ہوگئے ہیں اور کئی نوجوان جوئے کی لت سے تباہی کے دہانے ہر ہیں مگر پولیس جوئے کے اڈوں کو بند کرنے میں سنجیدگی کا اظہار نہیں کر رہی ہے۔

انتظامیہ نے لاک ڈاؤن کے دوران بھی جوئے کی دکانوں کو کھلی چھوٹ دے رکھی تھی اور شکایات کے باوجود جوئے کے اڈے بند نہیں کروائے گئے۔ اسسٹنٹ کمشنر ارشد ابراہیم صدیقی کا موقف ہے کہ جوئے کی دکانیں میرے دائرہ کار میں نہیں ہیں لہٰذا میں کارروائی نہیں کرسکتا۔

متعلقہ تحاریر