نواز شریف پر ہونے والے حملے کی حقیقت سامنے آگئی

میاں عمران کا کہنا ہے کہ ’نواز شریف پر کوئی حملہ نہیں ہوا۔ حقیقت یہ ہے کہ میرے اور ناصر بٹ کے درمیان لین دین کا تنازعہ تھا۔‘

جمعے کے روز سے برطانیہ میں مسلم لیگ (ن) کے بانی نواز شریف کے بیٹے حسن نواز کے دفتر پر حملے سے متعلق سوشل میڈیا پر خبر گردش کر رہی تھی جس کے بعد برطانوی شہری نے اس واقعے کی حقیقت بیان کردی ہے۔

برطانوی شہری میاں عمران نے سوشل میڈیا پر جاری ایک ویڈیو پیغام میں کہا ہے کہ نواز شریف پر ہونے والے حملے کی حقیقت کچھ اور ہے۔ دراصل میاں نواز شریف پر کوئی حملہ نہیں ہوا ہے۔ حقیقت یہ ہے کہ میرے اور نواز شریف کے قریبی ساتھی ناصر بٹ کے درمیان لین دین کا تنازعہ تھا۔ اس سلسلے میں عدالت نے اُن کا گھر فروخت کر کے میری رقم واپس کرنے کے لیے حکم نامہ جاری کیا تھا۔ یہ حکم نامہ 8 ماہ قبل جاری کیا گیا تھا لیکن کرونا کی وباء کے باعث یہ کام ہو نہیں سکا تھا۔ اب عدالت نے دوبارہ حکم نامہ جاری کیا۔

یہ بھی پڑھیے

ن لیگ کی لندن میں عدالتی معاملے کو سیاسی رنگ دینے کی کوشش

انہوں نے کہا کہ عدالتی بیلف کئی مرتبہ ناصر بٹ کے گھر جا چکا ہے لیکن وہ رہائش گاہ میں موجود نہیں تھے۔ ناصر بٹ صبح سویرے نواز شریف کے دفتر چلے جاتے تھے۔ عدالتی بیلف 2، 3 روز قبل نواز شریف کے دفتر پہنچا تھا جس کے بعد مسلم لیگ (ن) نے شور مچانا شروع کردیا۔ لیکن حقیقت یہ ہے کہ ناصر بٹ نے میرے پیسے دینے ہیں کیونکہ میں مقدمہ جیت چکا ہوں۔

متعلقہ تحاریر