عمران خان کی سفارتکاروں کی سرزنش سودمند ثابت

دنیا بھر کے قونصل خانوں اور سفارت خانوں میں خدمات انجام دینے والے سفارت کاروں کے رویوں میں تبدیلی آنے لگی ہے۔

وزیر اعظم عمران خان کی غیر ملکی سفارتکاروں کی سرزنش سودمند ثابت ہونے لگی ہے۔ پوری دنیا کے قونصل خانوں اور سفارت خانوں میں خدمات انجام دینے والے سفارت کاروں کے رویوں میں تبدیلی آنے لگی ہے۔

حال ہی میں کینیڈا کے دارالحکومت ٹورنٹو میں مقیم ایک پاکستانی شہری اعجاز نے سوشل میڈیا پر ایک روداد سنائی کہ کس طرح ہنگامی صورتحال میں قونصل خانہ پاکستان نے ان کے کزن کو سہولت فراہم کی۔

یہ بھی پڑھیے

وزیر اعلیٰ خیبرپختونخوا کے بھیس بدل کر دفاتر میں چھاپے

سماجی رابطوں کی ویب سائٹ پر انہوں نے لکھا کہ گذشتہ برس ان کے کزن کے والد کا انتقال ہوگیا تھا اور انہیں پاکستان آنا تھا لیکن پاسپورٹ کی معیاد ختم ہوچکی تھی۔

اعجاز نازمی صارف نے لکھا کہ وہ سنیچر کا روز تھا اور ان کے کزن کو پاکستانی ویزے کی ضرورت تھی۔ قونصل خانے کے عملے نے سوگواروں کو پاکستانی ویزا لینے کے لیے اتوار کو آنے کو کہا۔

انہوں نے بتایا کہ ان کے کزن اگلے ہی روز قونصل خانے پہنچے اور ایک گھنٹے کے اندر ویزا کا پورا عمل ختم کردیا۔

جب سوگوار شخص نے غیر ملکی سفارت کار کا شکریہ ادا کیا تو انہوں نے صارف کے چچا زاد بھائی کو بتایا کہ انہیں وزیر اعظم عمران خان کا شکریہ ادا کرنا چاہیے جنہوں نے غیرملکی مشنز کو 24 گھنٹے ٹیلیفون لائنز کھلی رکھنے کی ہدایت کی تھی کیونکہ کسی کو ہنگامی صورتحال ہوسکتی ہے۔

رواں سال اپریل میں وزیر اعظم عمران خان نے سعودی عرب میں متعین سفیر کو ہٹا دیا تھا اور 6 دیگر سفارتکاروں کو واپس بلا لیا تھا۔ سعودی عرب کے سابق سفیر راجہ علی اعجاز کو معطل کردیا گیا تھا جبکہ سعودی عرب سے سفارتی مشن واپس بلایا گیا تھا۔

متعلقہ تحاریر