کیا جمعے کی چھٹی معیشت کے لیے فائدہ مند ہے؟

معاشی مبصرین کا کہنا ہے کہ اگر ہفتہ وار تعطیل جمعے کے روز کی جائے تو معیشت پر کہیں نہ کہیں اس کا برا اثر ضرور پڑے گا۔

پاکستان کے صوبہ خیبرپختونخوا کی اسمبلی نے جمعے کی چھٹی کی بحالی کے لیے جماعت اسلامی کے ممبران کی قرارداد متفقہ طور پر منظور کرلی ہے۔ قرارداد اراکین اسمبلی حمیرا خاتون اور حاجی سراج الدین خان نے پیش کی تھی۔ جبکہ معاشی مبصرین نے جمعے کی چھٹی کو معیشت کے لیے مضر قرار دیا ہے۔

منگل کے روز خیبرپختونخوا اسمبلی کے اجلاس میں متعدد قراردادوں کی منظوری دی گئی۔ جمعے کی چھٹی کی بحالی کے حوالے سے جماعت اسلامی کے ممبران حمیرا خاتون اور حاجی سراج الدین خان کی جانب سے موقف اپنایا گیا ہے کہ پاکستان اسلام کے نام پر معرض وجود میں آیا ہے اور اسلامی تعلیمات کی رو سے جمعتہ المبارک کی بڑی اہمیت ہے۔ اس دن کو دیگر ایام کا سردار کہا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیے

خیبرپختونخوا میں خاصہ دار فورس کی بحالی کا مطالبہ

انہوں نے کہا کہ قرآن پاک میں بھی جمعے کے دن ظہر کی اذان کے ساتھ ہی کاروبار بند کر کے نماز کے لیے مسجد جانے کا حکم دیا گیا ہے۔ ماضی میں ملک میں جمعے کے دن ہفتہ وار سرکاری تعطیل ہوا کرتی تھی جس کے بعد اتوار کے دن سرکاری تعطیل کا فیصلہ کیا گیا۔ جب سے ملک میں اتوار کے دن ہفتہ وار تعطیل کا اعلان ہوا ہے تب سے ملک بھر میں بازاروں، مارکیٹوں اور نجی اداروں میں کہیں پر جمعہ اور کہیں پر اتوار کے دن ہفتہ وار تعطیل ہوتی ہے۔ جبکہ سرکاری دفاتر میں بھی جمعے کے دن دوپہر 12 بجے کے بعد عملاً چھٹی ہوتی ہے جس سے کاروباری طبقہ سمیت ملک کی معیشت پر بھی برے اثرات مرتب ہو رہے ہیں اور سرکاری امور بھی سست روی کا شکار ہیں۔

قرارداد کے ذریعے وفاقی حکومت سے سفارش کی گئی ہے کہ ملک بھر میں جمعے کی سرکاری چھٹی کو فی الفور بحال کیا جائے تاکہ اس حوالے سے درپیش مشکلات اور مسائل سے نجات مل سکے اور عوام یکسوئی کے ساتھ جمعے کے دن عبادات کی ادائیگی کر سکیں۔

خیبرپختونخوا اراکین عدم دلچسپی
Express Tribune

معاشی مبصرین کا کہنا ہے کہ اگر ہفتہ وار تعطیل جمعے کے روز کی جائے تو معیشت پر کہیں نہ کہیں اس کا برا اثر ضرور پڑے گا۔ دنیا بھر میں کاروباری سرگرمیاں جمعے کے روز جاری رہتی ہیں اور ایسے میں اس دن کی چھٹی تجارت میں رکاوٹ بنے گی۔

چند معاشی مبصرین کا خیال ہے کہ ہمیں اپنا موازنہ عرب ممالک سے نہیں کرنا چاہیے۔ وہاں جمعے کی تعطیل تو ہوتی ہے لیکن وہ ممالک تیل کی دولت سے مالامال ہیں اس لیے اُن کی اور پاکستان کی معیشت کے حالات یکسر مختلف ہیں۔

متعلقہ تحاریر