خاتون ٹک ٹاکر کے واقعے نے کئی  لڑکیوں  کو زبان  دے  دی 

ایک خاتون نے سوشل میڈیا پر بتایا کہ انہیں بھی اقبال پارک میں اوباش لڑکوں نے ہراسگی کا نشانہ بنایا تھا۔

مینار  پاکستان  کے  اقبال  پارک  میں خاتون  ٹک  ٹاکر  کے  ساتھ  بدتمیزی  کے  واقعے  نے  کئی  لڑکیوں  کو زبان  دے  دی۔  متعدد  خواتین  نے اقبال  پارک  اور  مری  مال  روڈ  پر  اپنے  ساتھ  ہونے  والے  واقعات  سوشل  میڈیا  پر  شیئر  کردیئے۔

ہمارے  ملک  میں  خواتین  کو  ہراساں  کرنے  کے  واقعات  کوئی  نئی  بات  نہیں  ہیں  تاہم معاشرتی  دباؤ کے  باعث  بہت  سی  لڑکیاں  اس  حوالے  سے  بات  کرنے  سے  کتراتی ہیں اور  اپنے  ساتھ  ہوئے  ظلم  کو  خاموشی  سے  برداشت  کرنے  پر  مجبور ہوجاتی  ہیں۔ مینار  پاکستان  پر  خاتون  ٹک  ٹاکر  کے  ساتھ  بدتمیزی  کے  واقعے  کے  بعد جس  طرح  عائشہ نے  ڈٹ  کر  حالات  کا  سامنا  کیا اور  ذمہ  داران  کے  خلاف  مقدمہ  درج  کرایا،  اس  سے  کئی  لڑکیوں  کو  ہمت  ملی  اور  انہوں  نے  ماضی  میں  اپنے  ساتھ  ہونے  والے  ظلم  کے  خلاف  آواز  اٹھائی۔  متعدد  لڑکیوں  نے  سوشل  میڈیا  پر بتایا  کہ  ان  کے  ساتھ  بھی لاہور کے اقبال  پارک اور  مری  کے  مال  روڈ  پر  اس  قسم  کے واقعات رونما  ہوچکے  ہیں  اور  پولیس  خاموش  تماشائی  بنی  رہی۔ اس  مرتبہ معاملہ سوشل میڈیا  پر  ویڈیو  کے  وائرل  ہونے  کی  وجہ  سے  کھل  کر  سامنے  آیا۔

ایک  خاتون  نے  سماجی  رابطوں  کی  ویب  سائٹ  ٹوئٹر  پر نام  نہ  ظاہر  کرتے  ہوئے  اپنی  کہانی  سنائی۔  خاتون  نے  لکھا  کہ  چند  سال  قبل  ان  کے  ساتھ  بھی  اقبال  پارک  میں  وہی  سب  کچھ  ہوا  تھا  جو یوم  آزادی  پر عائشہ کے  ساتھ  ہوا،  اس  لیے  وہ  عائشہ  کے درد  کو سمجھ  سکتی  ہیں۔  خاتون  کے  مطابق  انہیں  40 سے50  لڑکوں  کے  گروپ  نے  جنسی ہراسگی  کا  نشانہ  بنایا۔  وہ  روتی  رہیں  اور  اوباش  لڑکے  ہنستے  رہے۔

یہ  بھی  پڑھیے

مدد چاہتی ہے یہ حواء کی بیٹی

ایک  اور  خاتون  نے  ٹوئٹر  پر  بتایا  کہ  13 اگست  کی  رات  تقریباً  9   بجے  کے  قریب  وہ  مری  مال  روڈ  پر اپنی  فیملی  کے  ساتھ  موجود  تھیں کہ  اچانک  50   سے  60   لڑکوں  کے  گروپ  نے  انہیں  گھیر لیا  اور  بدتمیزی  شروع  کردی۔ ایک پولیس  اہلکار  قریب  ہی  کھڑا  تھا  لیکن  اس  نے  انہیں  کچھ  نہیں  کہا، خاتون  کے  مطابق  یہ  طوفان بدتمیزی  چلتا  رہا  یہاں  تک کہ  انہوں  نے  خود  لڑکوں  کو  مارنا  شروع  کردیا  اور  ساتھ  زاروقطار  رونے  لگیں،  شور  بڑھا  تو  پولیس  اہلکار آگے  آیا  اور  لڑکوں  سے  صرف  یہ  کہا  کہ  رش  کم  کرؤ،  کسی  نے  ان  تمام  لڑکوں  سے  نہیں  پوچھا  کہ  وہ  کیا  کرنے  کی  کوشش  کررہے  تھے۔ خاتون  نے  بتایا  کہ  یہ  واقعہ  ان  کے  اور  ان  کے  خاندان  کے  لیے  کسی ڈراؤنے  خواب  سے  کم  نہیں  ہے۔

ایک  خاتون  نے  ٹوئٹر  پر  بتایا  کہ ان  کا  تعلق  پشاور  سے  ہے، وہ  مختلف  شہر  گھوم  چکی  ہیں  لیکن  مری  کا  مال  روڈ  اور  لاہور  شہر  کا  تجربہ ان  کے  لیے  سب  سے  برا  ثابت  ہوا۔ خاتون  کے  مطابق  ان  شہروں کے  لوگوں  کی نسبت پشاور میں  خواتین  کے  ساتھ  بدتمیزی کرنے پر  فوری  ایکشن  لیا  جاتا  ہے۔

ایک  اور  خاتون  نے  بھی  لکھا  کہ  مری  کے  مال  روڈ  پر  کوئی  شریف  خاتون  اکیلے  نہیں  گھوم  سکتی۔

Facebook Comments Box