ٹی آر پی 360 کے سخت سوالات: نہال ہاشمی نے صحافی کو اسرائیلی ایجنٹ قرار دے دیا

مسلم لیگ ن کے سینئر رہنما نہال ہاشمی  نے نیوز 360 کے پروگرام ٹی آر پی 360 کو دیئے گئے انٹر ویو میں کہا ہے کہ سابق وزیراعظم میاں محمد نوازشریف کو ووٹ کو عزت دینے کی سزا دی جارہی ہے۔

بقول  نہال  ہاشمی کسی بھی ملکی ادارے کو اپنے ڈومین سے باہر نکل کر کام نہیں کرناچاہئے، انھوں نے ملکی سیاست میں اداروں کے کردار پر سخت تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ملازم اور منتخب نمائندگان میں بہت فرق ہوتا ہے۔ کسی بھی ملازم کو یہ اختیار نہیں ہے کہ وہ  منتخب وزیراعظم کوعہدے سے ہٹادے ، انھوں نے 1999 میں  اس وقت کے آرمی چیف  جنرل  پرویز مشرف کے اقدامات کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ یہ کسی جمہوری ملک میں نہیں ہوتا ہے کہ ایک شخص وزیراعظم کو بے دخل کردے۔

سینئر اینکر پرسن عرفان حیدر  نے مسلم لیگ ن کے تینوں ادوار میں ہونے والی سیاسی ناہمواریوں کا ذکر کیا تو نہال  ہاشمی نے جواب دینے کے بجائے انہیں غیر ملکی ایجنسیوں کا کارندہ قرار دے  دیا۔  کہا نوازشریف کے قابل تحسین اقدامات کو سراہنے کے بجائے آپ ان کی کردار کشی کررہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیے

نہال ہاشمی دونوں بیٹوں سمیت گرفتار

نہال ہاشمی نے ایک صحافی کے سخت مگر سنجیدہ سوالات کو  پلانٹڈ قرار دیتے ہوئے اس پر اسرائیل کی خفیہ ایجنسی “موساد ”  اور امریکی خفیہ ایجنسی “سی آئی اے” کا  ایجنٹ ہونے کے سنگین الزامات عائد کیے۔ نہال ہاشمی ایک سینئر سیاستدان ہونےکے ساتھ ساتھ ایک سینئر وکیل بھی ہیں  تاہم ان کی جانب سے اخلاقیات کے برخلاف ردعمل  ان کی ذہنی پسماندگی کا ثبوت ہے جہاں انھوں نے  سنجیدہ سوالات کا جواب دینے کے بجائے سنگین الزامات اور دھمکیوں  کا سہارا لیا ۔

Facebook Comments Box