میر شکیل الرحمان کی بریت کی درخواست مسترد

احتساب عدالت لاہور کے جج نے نیب پراسیکیوٹر کی درخواست پر ملزم کی درخواست خارج کی۔

لاہور کی احتساب عدالت نے جنگ اور جیوز نیوز کے ایڈیٹر ان چیف میر شکیل الرحمان کی غیرقانونی پلاٹ الاٹمنٹ ریفرنس میں بریت کی درخواست مسترد کردی ہے۔

احتساب عدالت کے جج اسد علی نے میر شکیل الرحمان کے خلاف لاہور میں غیرقانونی پلاٹ کی الاٹمنٹ سے متعلق درخواست پر سماعت کی۔ عدالت میں میر شکیل الرحمان اور ان کے وکلا جبکہ نیب کی جانب سے اسپیشل پراسیکیوٹر حارث قریشی پیش ہوئے۔

نیب پراسیکیوٹر نے عدالت کو بتایا کی میر شکیل الرحمان نے سابق وزیراعلیٰ پنجاب نواز شریف سے ملی بھگت کرکے غیرقانونی طور پر پلاٹ حاصل کیے۔ ملزم پلاٹ کے علاوہ 2 گلیاں بھی اپنے نام الاٹ کروا چکے ہیں۔

دوران سماعت نیب پراسیکیوٹر نے عدالت کو بتایا کہ ملزم میر شکیل الرحمان نے اپنا جرم چھپانے کے لیے پلاٹ اپنی اہلیہ اور بچوں کے نام پر منتقل کردیے تھے۔ حارث قریشی نے عدالت کو درخواست  کی کہ ملزم کے خلاف جانچ جاری ہے اس لیے بریت کی درخواست مسترد کی جائے۔

یہ بھی پڑھیے

غیرقانونی الاٹمنٹ ریفرنس میں میر شکیل الرحمان کے وکیل کی چالاکیاں

نیب پراسیکیوٹر کے دلائل کے بعد عدالت نے میر شکیل الرحمان کی غیرقانونی پلاٹ الاٹمنٹ ریفرنس سے بریت کی درخواست خارج کردی۔ عدالت نے 22 ستمبر کو پراسیکیوشن کے مزید گواہوں کو بیان قلمبند کرنے کے لیے طلب کرلیا ہے۔

واضح رہے کہ نیب لاہور نے 12 مارچ 2020 کو میر شکیل الرحمان کو گرفتار کیا تھا جبکہ 26 جون 2020 کو ریفرنس فائل کیا گیا۔ جنگ اور جیو نیوز کے مالک اس وقت ضمانت پر آزاد ہیں۔

Facebook Comments Box