پنجاب بیوروکریسی میں بڑے پیمانے پر تقرریاں اور تبادلے متوقع

ذرائع کے مطابق سیکرٹری داخلہ کے لیے دو افسران سیف انجم اور کیپٹن ریٹائرڈ محمد عثمان کے نام زیر غور ہیں۔

پنجاب بیوروکریسی میں بڑے پیمانے پر تقرریاں اور تبادلے کیے جارہے ہیں۔ ذرائع کے مطابق چیف سیکرٹری کی تعیناتی کے بعد 7 سیکرٹریز، 4 کمشنرز، 8 ڈپٹی کمشنرز کو تبدیل کیے جانے کا امکان ظاہر کیا جارہا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ ایسے ڈپٹی کمشنرز اور دیگر افسران جو سفارش کی بنیاد پر اہم ضلعی عہدوں پر تعینات ہوئے اور ایسے افسران جن کی کارکردگی انتہائی مایوس کن رہی انہیں ہٹانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیے

ایک اور نیوز چینل بند ہوگیا، صحافتی تنظیمیں خاموش

نیوز 360 کے ذرائع کے مطابق سیکرٹری فوڈ شہریار سلطان، سیکرٹری آبپاشی کیپٹن ریٹائرڈ سیف انجم کو تبدیل کرکے اہم محکمے میں تعینات کرنے کا امکان ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ سیکرٹری معدنیات، سیکرٹری ہائیر ایجوکیشن، سیکرٹری وویمن ڈویلپمنٹ کی بھی تبدیلی کا امکان ہے۔

ذرائع کے مطابق سیکرٹری لیبر، سیکرٹری لائیو سٹاک میں بھی بہتر افسران تعینات کئے جائیں گے۔

کمشنر لاہور کیپٹن ریٹائرڈ محمد عثمان کو تبدیل کرکے آن پے اینڈ اسکیل پر سیکرٹری داخلہ تعینات کرنے پر غور کیا جارہا ہے۔

سیف انجم کا تبادلہ کرکے ایڈیشنل چیف سیکرٹری پنجاب داخلہ تعیناتی پر غور کیا جارہاہے۔

ذرائع کے مطابق سیکرٹری داخلہ کے لیے دو افسران سیف انجم اور کیپٹن ریٹائرڈ محمد عثمان کے نام زیر غور ہیں۔

ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ سیکرٹری سروسز صائمہ سعید کو تبدیل کرنے کا امکان ہے، جبکہ متعدد سینئر افسران نے محکمہ سروسز سے متعلق اپنے تحفظات سے آگاہ کیا ہے۔

ذرائع کے مطابق سابق چیف سیکرٹری پنجاب جواد رفیق ملک نے بعض فیصلے سیکرٹری سروسز صائمہ سعید کے کہنے پر لئے جس پر بہت سے مسائل پیدا ہوئے۔

ذرائع کے مطابق شہریار سلطان یا احمد رضا سرور کو سیکرٹری سروسز تعینات کرنے پر غور کیا جارہا ہے، جبکہ سیکرٹری اوقاف نبیل جاوید کو بھی تبدیل کئے جانے کا امکان ہے۔

کمشنر فیصل آباد ثاقب منان، کمشنر ساہیوال بہادر علی قاضی، کمشنر راولپنڈی گلزار شاہ، کمشنر سرگودھا فرح مسعود کی تبدیلی کا امکان ہے۔

ذرائع کے مطابق ڈپٹی کمشنر قصور آسیہ گل، ڈپٹی کمشنر پاکپتن رانا  شکیل، ڈپٹی کمشنر جہلم رائو پرویز ، ڈپٹی کمشنر ننکانہ صاحب مصور احمد، ڈپٹی کمشنر اصغر جوئیہ کو ہٹائے جانے کا امکان ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ ڈپٹی کمشنر لاہور عمر شیر چھٹہ کو ایک بار پھر تبدیل کئے جانے پر غور کیا جارہا ہے۔ ڈپٹی کمشنر لاہور کے لئے سلمان غنی اور سہیل اشرف سمیت 4 افسران کے نام زیر غور ہیں۔

ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ ڈپٹی کمشنر لاہور عمر شیر چھٹہ کو جونیئر ہونے کے باوجود اور معاملات کو بہتر انداز میں چلانے سے متعلق تحفظات سامنے آئے ہیں، جنوبی پنجاب کے چار اضلاع کے ڈپٹی کمشنرز کی تبدیلی بھی زیر غور ہے۔

واضح رہے کہ یہ تقرریاں اور تبادلے اس وقت کیے جارہے جبکہ وزیراعظم عمران خان آج ایک روزہ دورے پر لاہور پہنچ رہے ہیں۔

گزشتہ روز وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت کنٹونمنٹ بورڈز انتخابات کے حوالے سے اجلاس منعقد ہوا تھا۔

اجلاس میں وزیراعظم نے پنجاب میں پی ٹی آئی کی شکست پر سخت برہمی کا اظہار کیا تھا۔ وزیراعظم نے لاہور ، راولپنڈی اور ملتان میں شکست کے حوالے سے الگ الگ رپورٹ طلب کرلی ہے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ اتنے برے انتخابی نتائج کے پیچھے کیا وجوہات ہیں اس بارے میں مفصل رپورٹ پیش کی جائے۔

Facebook Comments Box