اپوزیشن کے تحریک عدم اعتماد کا توڑ، حکومت منی بجٹ پاس کرانے کےلیے پُرعزم

وزیراعظم عمران خان نے حکومتی اور اتحادی جماعتوں کے تمام ارکان قومی اسمبلی کو اسلام آباد پہنچنے کی ہدایت کی ہے۔

قومی اسمبلی میں حزب اختلاف کی جماعتوں نے وزیراعظم کے خلاف تحریک عدم اعتماد لانے کےلیے مشاورت شروع کردی ہے جبکہ دوسری جانب وزیراعظم عمران خان آج قومی اسمبلی کے اجلاس میں شرکت کریں۔ حکومت نے منی بجٹ کو منظور کرانے کی حکمت عملی بھی ترتیب دے دی ہے جو ایک طرح سے عمران خان پر اعتماد کا اظہار ہی ہوگا۔

وزیراعظم عمران خان بھی آج قومی اسمبلی کے اجلاس میں شرکت کریں گے۔ وہ قومی اسمبلی کے اجلاس سے قبل پارلیمانی پارٹی کے اجلاس کی صدارت کریں گے جس میں اپوزیشن کے ممکنہ احتجاج کے خلاف حکومتی حکمت عملی کو حتمی شکل دی جائے گی۔

حکومت نے فنانس سپلیمنٹری بل 2021 – جسے منی بجٹ بھی کہا جاتا ہے – آج قومی اسمبلی سے منظور کروانے کے لیے حکمت عملی کو حتمی شکل دے دی ہے۔

یہ بھی پڑھیے

نواز شریف کے لندن میں مزے، شہباز شریف برے پھنسے

رانا شمیم کی بہو ،پوتے اور پوتی کی جانب سے دائر درخواست خارج

نیوز 360 کے ذرائع کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے حکومتی اور اتحادی جماعتوں کے تمام ارکان قومی اسمبلی کو اسلام آباد پہنچنے کی ہدایت کی ہے۔

اطلاعات کے مطابق پنجاب اور خیبرپختونخوا کے وزرائے اعلیٰ بھی وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں موجود ہیں جبکہ دونوں صوبوں کے اراکین قومی اسمبلی کے اعزاز میں گذشتہ رات عشائیہ بھی دیا گیا تھا۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق عشائیہ میں اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر اور وفاقی وزراء نے بھی شرکت کی تھی۔ پی ٹی آئی قیادت نے اپنے تمام اراکین قومی اسمبلی کو دوپہر 2 بجے پارلیمنٹ ہاؤس پہنچنے کی ہدایت کی ہے۔

منی بجٹ کے حوالے سے اپوزیشن کے شور شرابے کو جھوٹ کا پلندہ قرار دیتے ہوئے سینیٹر فیصل جاوید نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر پیغام شیئر کرتے ہوئے لکھا ہے کہ ” اپوزیشن سپلیمنٹری بل پر جھوٹ اور گمراہ کن پروپیگنڈہ کر رہی ہے – حقیقت یہ ہے کہ اس سے معیشت دستاویزی ہو جائے گی، امیر سے ٹیکس لے کر غریب پر لگایا جائے گا، ٹیکس کا غریب پر اثر نہیں پڑے گا – اسٹاک مارکیٹ میں بہتری آئے گی- آنے والے چند ہفتوں میں مہنگائی میں کمی آنا شروع ہو جائے گی-"

قومی اسمبلی کا اجلاس اور اپوزیشن کی حکمت عملی

دریں اثنا، اپوزیشن جماعتوں نے قومی اسمبلی میں احتجاجی حکمت عملی ترتیب دے دی ہے، حکومت کی جانب سے منی بجٹ کو روکنے کے لیے قومی اسمبلی کے اندر اور باہر حکومت پر دباؤ ڈالنے کے لیے آستینیں چڑھا لی ہیں۔

ذرائع کے مطابق قومی اسمبلی کے اجلاس سے قبل اپوزیشن جماعتوں کی جانب سے ایک احتجاجی ریلی نکالی جائے گی جس سے قائد حزب اختلاف شہباز شریف اور دیگر اپوزیشن رہنما خطاب کریں گے۔

متعلقہ تحاریر