جنرل (ر) فیض حمید کی صاحبزادی کی شادی، مسلم لیگ (ن) کی قیادت دعوت سے محروم

شادی کی تقریب میں دعوت نہ دینے پر تبصرہ نگاروں کا کہنا فیض حمید اور ن لیگ کی قیادت کے درمیان باطنی اختلافات کھل کر سامنے آگئے ہیں۔ بقول شاعر "ورنہ اتنے تو مراسم تھے کہ آتے جاتے"

لیفٹیننٹ جنرل (ر) فیض حمید کی صاحبزادی کی شادی گذشتہ روز انجام پائی ، تقریب میں سابق آرمی چیف جنرل (ر) قمر جاوید باجوہ سمیت اعلیٰ فوجی قیادت سمیت نامور سیاستدانوں نے شرکت کی ، تاہم شادی کی تقریب میں حکمران جماعت مسلم لیگ (ن) کو شرکت کی دعوت نہیں دی گئی تھی۔

ہفتے کے روز راولپنڈی میں انجام پانے والی شادی خانہ آبادی کی تقریب میں تمام شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد نے شرکت کی۔

یہ بھی پڑھیے

القادر یونیورسٹی ارضی کیس: نیب کا زلفی بخاری کو تیسرا نوٹس، دستاویزات بھی طلب

الیکشن کمیشن عمران خان کو پارٹی قیادت سے ہٹانے کیلیے سرگرم، طلبی کا نوٹس جاری

تقریب میں پاکستان تحریک انصاف کے رہنما فواد چوہدری، وائس چیئرمین تحریک انصاف شاہ محمود قریشی، سابق آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ ، سابق آرمی چیف جنرل اشفاق پرویز کیانی، لیفٹیننٹ جنرل (ر) عاصم سلیم باجوہ ، CJCSC جنرل ساحر شمشاد مرزا، آزاد کشمیر کے وزیراعظم سردار تنویر الیاس، سابق چیف جسٹس ثاقب نثار اور دیگر نے شرکت کی۔

تبصرہ نگاروں نے حکمران جماعت مسلم لیگ (ن) کو لیفٹیننٹ جنرل (ر) فیض حمید کی جانب سے اپنی بیٹی کی شادی میں مدعو نہ کرنے پر حیرت کا اظہار کیا ہے۔ ان کا کہنا فیض حمید اور ن لیگ کی قیادت کے درمیان باطنی اختلافات کھل کر سامنے آگئے ہیں۔ بقول شاعر "ورنہ اتنے تو مراسم تھے کہ آتے جاتے”

سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی ویڈیو میں دیکھا جاسکتا ہے کہ لیفٹیننٹ جنرل (ر) فیض حمید اپنی صاحبزادی کو اسٹیج کی جانب لےکر جارہے ہیں۔ دلہن نے خوبصورت مرون لباس زیب تن کر رکھا ہے جبکہ جنرل (ر) فیض حمید نے سیاہ لباس پہن رکھا ہے۔

یاد رہے کہ لیفٹیننٹ جنرل فیض حمید ایک ممتاز پاکستانی ریٹائرڈ تھری اسٹار آرمی جنرل ہیں جنہوں نے آئی ایس آئی چیف ، کور کمانڈر بہاولپور اور کور کمانڈر  پشاور کے طور پر خدمات انجام دیں ہیں۔

متعلقہ تحاریر