سپریم کورٹ نے ادارے کا آڈٹ نہ کروانے کی خبروں کو بے بنیاد قرار دے دیا

سپریم کورٹ کے ترجمان نے کہاکہ پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کو غلط معلومات فراہم کی گئی ہیں، ادارے کا 10 سے سے آڈٹ نہ کروانے کی خبروں میں کوئی سچائی نہیں ہے

سپریم کورٹ آف پاکستان (ایس سی پی) کے ترجمان نے  دس سال سے ادارے کا آڈٹ نہ ہونے کی خبروں کو بے بنیاد اور گمراہ کن قرار دے دیا ہے۔ چیئرمین پبلک اکاؤنٹس کمیٹی نور عالم خان نے عدالت عظمیٰ کا آڈت نہ کروانے پر رجسٹرار کو طلب کیا تھا۔

سپریم کورٹ کے ترجمان نے ادارے کا گزشتہ 10 سال سے آڈٹ نہ کروانے کی خبروں کو بے بنیاد قرار دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کا جون 2021 تک آڈٹ مکمل ہوچکا ہے۔

یہ بھی پڑھیے

تمام سیاسی جماعتیں مذاکرات کے حوالے سے کل تک اپنی پوزیشن واضح کریں، سپریم کورٹ

ترجمان نے بتایا کہ سپریم کورٹ کا 2021 سے 2022 کے آڈٹ کا عمل جاری ہے جس کی تصدیق آڈیٹر جنرل پاکستان سے تصدیق کی جاسکتی ہے۔

سپریم کورٹ کے ترجمان نے کہا کہ پبلک اکاؤنٹس کمیٹی (پی اے سی) کو فراہم کی گئی معلومات درست نہیں ہیں۔ آڈٹ نہ کروانے کی خبر بے بنیاد ہے ۔

یاد رہے کہ چیئرمین پبلک اکاؤنٹس کمیٹی (پی اے سی) نور عالم خان نے اظہار برہمی کرتے ہوئے سپریم کورٹ کا آڈٹ نہ کروانے پر رجسٹرار سپریم کورٹ کو طلب کرلیا۔

چیئرمین کمیٹی نور عالم خان کا کہنا تھا کہ میں کسی سے نہیں ڈرتا ہوں۔ انہوں نے عید کے بعد آڈٹ نہ کروانے پر رجسٹرار سپریم کورٹ کو طلب کر لیا ہے۔

متعلقہ تحاریر