سندھی زبان سے متعلق نصیرالدین شاہ کی کم علمی پر تنقید کے نشتر برس گئے

معروف  بھارتی اداکارنصیرالدین شاہ نے کہا کہ بلاشبہ سندھی اب پاکستان میں نہیں بولی جاتی جس پر سوشل میڈیاصارفین نے ان کی لاعلمی پر رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے ان کی تصحیح کی اور تنقید کا نشانہ بھی بنایا

مشہور بھارتی اداکار نصیر الدین شاہ کا کہنا ہے کہ پاکستان میں سرائیکی ، پنجابی،پشتو سمیت  کئی زبانیں بولی جاتی ہے تاہم سندھی زبان ناپید ہورہی ہے۔

مشہور و معروف بالی وڈ اداکار نصیر الدین شاہ نے دعویٰ کیا ہے کہ پاکستان میں سندھی زبان نہیں بولی جاتی ہے جس پر انہیں سوشل میڈیا پر ٹرول کیا جارہا ہے ۔

یہ بھی پڑھیے

مغل اتنے ہی برے تھے تو ان کا تعمیر کردہ تاج محل اور لال قلعہ گرادو، نصیر الدین شاہ

پدم بھوشن، پدم شری اعزاز سمیت کئی بھارتی اور بین الاقوامی ایوارڈ حاصل کرنے والے اداکار نصیرالدین شاہ نے سندھی کو پاکستان نہ بولی جانے والی زبان قرار دیا۔

سوشل میڈیا صارفین نے اداکار نصیر الدین شاہ کی کم علمی کو آڑے ہاتھوں لیا۔  صارفین نے انہیں بتایا کہ پاکستان میں سندھی زبان بولی جاتی ہے ۔

معروف اداکارنے کہا  کہ بلاشبہ سندھی اب پاکستان میں نہیں بولی جاتی جس پر سوشل میڈیاصارفین نے ان کی لاعلمی پر رنج و غم کا اظہار کیا ہے ۔

پاکستان کے نجی پشتو چینل خیبر ٹی ویکے ڈاریکٹر حسن خان نے کہا کہ میں نے سنا تھا نصیرالدین شاہ  باخبر شخص ہیں تاہم اب  یہ غلط معلوم ہو رہا  ہے ۔

رضوان کریم نامی ٹوئٹر صارف نے لکھا کہ نصیرالدین شاہ نے  صرف  لاہور اور کراچی دیکھا ہے اور اسے ہی پاکستان سمجھا ۔خیر کوئی بات نہیں۔

ڈاکٹر زاہد پرویز نے نصیر الدین شاہ کی تصحیح کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں انگریزی اور اردو میڈیم کے بعد صرف سندھی میڈیم اسکول ہیں ۔

احسن ظفر نامی ایک صارف  نے وڈیو کلپ کو ایڈیٹڈ قرار دیا ۔ کلپ ختم ہونے سے پہلے ہی اس کی بھنویں اوپر جاتی ہیں کیونکہ وہ مزید کچھ کہنے والا ہے۔

متعلقہ تحاریر