حمزہ شہباز ضمنی انتخابات میں دھاندلی کیلئے ڈی پی اوز پر دباؤ ڈال رہا ہے، قریشی کا الزام

سابق وزیر خارجہ کا کہنا ہے ضمنی انتخابات حمزہ کے مستقبل کا مسئلہ ہے۔ وہ اپنے مستقبل کی خاطر الیکشن کمیشن کی ساکھ کو داؤ پر لگا سکتا ہے۔

پاکستان تحریک انصاف کے سینئر رہنما اور سابق وفاقی وزیر شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ حمزہ شہباز شریف کی جانب سے 14 ڈی پی اوز کو ضمنی انتخابات میں دھاندلی کے لیے پریشر رائز کیا جارہا ہے ، حمزہ شہباز شریف اپنی وزارت اعلیٰ کو بچانے کے لیے کسی بھی سطح پر جاسکتے ہیں ، تاہم یہ الیکشن کمیشن کی ذمہ داری ہے کہ وہ آزادانہ صاف اور شفاف الیکشن کرائے۔

لاہور میں سابق وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا ڈاکٹر یاسمین راشد اور حماد اظہر کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہنا تھا الیکشن کمیشن آف پاکستان کی آئینی ذمہ داری ہے کہ ہو صاف و شفاف الیکشن کرائے ۔ کوئی شخص الیکشن کمیشن کے معاملات میں مداخلت نہیں کرسکتا ہے۔

یہ بھی پڑھیے

مبینہ مراسلہ سیاسی تھا تو عمران سلامتی کمیٹی میں کیوں لے کر گئے؟ مریم نواز

وزراء اسمبلی نہیں آتے ، گھر جائیں اور الیکشن کروائیں، خورشید شاہ

سابق وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ پاکستان میں آج تک جتنے بھی انتخابات ہوئے ہیں ہارنے والی تمام جماعتوں نے انتخابات کو مسترد کردیا ، اس ملک آگے بڑھنے کے لیے ایک نئی روایت قائم کرنا ہو گی ، الیکشن کمیشن ایک مرتبہ پھر آزمائش سے دوچار ہونے والا ہے ، اور اس کی وجہ ہیں پنجاب کے 20 ضمنی انتخابات ، میں آج تک گیارہ الیکشن لڑے ہیں اور ان میں سے دس جیتے بھی ہیں۔

شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا میں میڈیا کو گواہ بنا کر کہتا ہوں کہ اگر الیکشن کمیشن نے آنے والے 20 ضمنی انتخابات میں اپنی ساکھ کھو دی تو آنے والے جنرل الیکشن دفن ہو جائیں گے۔ قوم جنرل الیکشن کے نتائج قبول نہیں کرے گی ، اگر ضمنی انتخابات صاف و شفاف نہ ہوئے تو اس ملک کا مستقبل داؤ پر لگ جائے گا۔

ان کا کہنا تھا ڈسکہ کے ضمنی انتخابات کے واقعات یاد ہیں خدا کے واسطے کہیں 20 ڈسکہ پیدا نہ ہو جائیں ۔ پنجاب حکومت کے تیور بڑے خطرناک دکھائی دے رہے ہیں ، ان کی سوچ اور حکمت عملی الیکشن کمیشن کی ساکھ کو متاثر کرے گی۔

شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا ضمنی انتخابات کا مسئلہ نہیں ہے بلکہ یہ ضمنی انتخابات حمزہ شہباز شریف کے مستقبل کا مسئلہ ہے۔ وہ اپنے مستقبل کو بچانے کے لیے الیکشن کمیشن کی ساکھ کو داؤ پر لگاسکتے ہیں ، وہ حدودقیود پر پھلانگ سکتے ہیں ، ضمنی انتخابات میں پنجاب حکومت کے وسائل اور انتظامیہ کو جھونک سکتے ہیں۔

پی ٹی آئی کے رہنما کا کہنا تھا جن امیدواروں کو حمزہ شہباز نے ٹکٹ دیئے ہیں ان سے کہا گیا ہے کہ یہ الیکشن آپ کا نہیں ہے الیکشن حمزہ شہباز کا ہے، حمزہ شہباز نے اپنی وزارت اعلیٰ بچانے کے لیے سیٹیں جیتنی نہیں دلوانی ہیں آپ کو۔ مارکیٹ میں یہ بات چل رہی ہے کہ 18 سیٹیں ن لیگ کو اور 2 سیٹیں پی ٹی آئی کو ملیں گی ۔ ضمنی انتخابات کو سبوتاژ کرنے کے لیے ویزیبل اور ان ویزیبل ہاتھ متحرک ہیں۔

ڈی پی اوز سے متعلق گفتگو کرتے ہوئے سابق وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ 14 اضلاع میں انتخابات ہو رہے ہیں اور 14 ڈی پی اوز کو ہدایات دے کر بھیجا گیا ہے کہ تمہارا مستقبل آنے والے ضمنی انتخابات سے جڑا ہوا ہے ۔ اگر رزلٹ نہ آیا تو پھر تم سیٹ پر نہیں ہو گے۔ بتایا جائے یہ کہاں کا اصول ہے اور کہاں کی سیاست ہے۔ ضلعی انتظامیہ میڈیا کو اریج کررہی ہے۔ ہم بتادینا چاہتے ہیں کہ دباؤ ڈال کر وفاداریاں تبدیل نہیں کی جاسکتی۔ لوگوں کی حمایت حاصل کرنے کے لیے ایف بی آر کے دباؤ کی دھمکیاں دی جارہی ہیں۔

Facebook Comments Box