پاکستانی اولمپئینز کی حوصلہ افزائی سے زیادہ حوصلہ شکنی

ماہور شہزاد کو شکست کا سامنا کرنا پڑا تو اسپورٹس جرنلسٹ شعیب جٹ مخالفت میں سامنے آگئے۔

پاکستانی صحافی شعیب جٹ نے ٹوکیو اولمپکس میں پاکستان کی نمائندگی کرنے والی بیڈمنٹن کھلاڑی ماہور شہزاد کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا۔ دوسری جانب قومی کرکٹ ٹیم کے کھلاڑی شاداب خان نے ٹوکیو اولمپکس میں ویٹ لفٹر طلحہ طالب شاندار کارکردگی پر انہیں خراج تحسین پیش کیا اور پاکستان کے اولمپک کھلاڑیوں کے لیے فنڈز اکٹھے کرنے کا اعلان کردیا۔

پاکستان سے جو اتھلیٹس اولمپکس تک پہنچ جاتے ہیں وہ ان کی اپنی کاوش اور محنت کا نتیجہ ہوتا ہے۔ وہاں جا کر کامیاب ہونے اور نہ ہونے سے زیادہ اہمیت یہ بات رکھتی ہے کہ وہ بنا کسی پروفیشنل تربیت کے اپنے بل بوتے پر پہنچے۔ لیکن، افسوس ہمارے ملک کے لوگ حوصلہ افزائی سے زیادہ حوصلہ شکنی کی طرف زیادہ دھیان دیتے ہیں۔ بیڈمنٹن کھلاڑی ماہور شہزاد کے ساتھ کچھ ایسا ہی ہوا۔

ٹوکیو اولمپکس میں پاکستان کی نمائندگی کرنے والی ماہور شہزاد کو جب شکست کا سامنا کرنا پڑا تو اسپورٹس جرنلسٹ شعیب جٹ مخالفت میں سامنے آگئے۔ سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر لکھا کہ جب سیکریٹری خود کوچ بن کر جائیں گے تو نتائج شرمناک ہی آئیں گے۔

یہ بھی پڑھیے

اولمپکس 2020، پاکستان کی ہاکی ٹیم کہاں رہ گئی؟

ماہور شہزاد نے ٹوئٹ کے جواب میں لکھا کہ ویسے ہی بیڈمنٹن کے کھیل میں پاکستان کا دنیا میں نام نہیں ہے اور جب وہ ملک کا نام روشن کرنے کی کوشش کررہی ہیں تو انہیں تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔

دوسری جانب ٹوکیو اولمپکس میں گزشتہ روز 67 کلو گرام کیٹگری کے لیے مردوں کے مقابلے ہوئے جس میں پاکستان کے ویٹ لفٹر طلحہ طالب نے شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کیا۔ گوجرانوالہ سے تعلق رکھنے والے 21 سالہ طلحہ طالب اولمپکس میں میڈل تو نہ جیت سکے مگر قوم کے دل ضرور جیت لیے۔

 

View this post on Instagram

 

A post shared by Hira Mani (@hiramaniofficial)

نوجوان ویٹ لفٹر نے پانچویں پوزیشن حاصل کی۔ قومی کرکٹ ٹیم کے کھلاڑی شاداب خان نے ٹوئٹ میں طلحہ طالب کی حوصلہ افزائی کی۔

ایک اور ٹوئٹ میں شاداب خان نے پاکستان کے اولمپک کھلاڑیوں کے لیے فنڈز اکٹھے کرنے کا اعلان بھی کیا۔

واضح رہے کہ طلحہ طالب نے رواں سال ایشین ویٹ لفٹنگ چیمپئن شپ میں کانسی کا تمغہ جیتا تھا۔

Facebook Comments Box