ویسٹ انڈیز سے شکست، بابراعظم کی کپتانی پر سوالات اٹھنے لگے

شائقین کے مطابق بابراعظم کے غلط فیصلوں کے باعث قومی ٹیم کو شکست ملی۔

کنگسٹن میں کھیلے گئے پہلے ٹیسٹ میچ میں ویسٹ انڈیز نے پاکستان کو سنسنی خیز مقابلے کے بعد شکست دے دی۔ قومی ٹیم کی شکست پر شائقین کرکٹ ٹیسٹ میچ میں بابراعظم کی کپتانی پر سوالات اٹھا رہے ہیں۔

ویسٹ انڈیز اور پاکستان کے درمیان 2 ٹیسٹ میچز کی سیریز کے پہلے میچ میں قومی ٹیم دوسری اننگ میں 203 رنز پر آل آؤٹ ہوگئی۔ ویسٹ انڈیز کو جیت کے لیے 168 رنز کا ہدف ملا جو کہ میزبان ٹیم نے آخری وکٹ پر حاصل کرلیا۔

میچ کی دوسری اننگ میں قومی ٹیم کی طرف سے کپتان بابراعظم 55، عابد علی 34، محمد رضوان 30 اور حسن علی 28 رنز بناکر نمایاں رہے۔ ویسٹ انڈیز کے فاسٹ بالر جیڈن سیلز نے عمدہ کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے 5 وکٹس حاصل کیں۔ پاکستانی بالرز نے بھی دوسری اننگ میں شاندار بالنگ کا مظاہرہ کرتے 16 رنز کے مجموعی اسکور پر ویسٹ انڈیز کے 3 کھلاڑیوں کو پویلین کی راہ دکھائی جس کے بعد جرمین بلیک ووڈ نے ذمہ دارانہ اننگ کھیلتے ہوئے 55 رنز بنائے۔ دوسری اننگز میں شاہین شاہ آفریدی نے 4 اور حسن علی نے 3 کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا تاہم ایک موقعے پر کپتان بابراعظم بالنگ کا درست فیصلہ نہ کرسکے جس کے باعث مہمان ٹیم نے 9 وکٹس کے نقصان پر ہدف حاصل کرکے کامیابی حاصل کی۔

یہ بھی پڑھیے

کرکٹر راشد خان کی عالمی رہنماؤں سے افغانستان میں جنگ بندی کی اپیل

شائقین کرکٹ نے قومی ٹیم کی جانب سے ویسٹ انڈیز کے 3 کیچز چھوڑنے اور بابراعظم کے غلط فیصلوں پر مایوسی کا اظہار کررہے ہیں۔ شائقین کا کہنا ہے کہ ون ڈے اور ٹی ٹوئنٹی میں بابراعظم درست فیصلے کرلیتے ہیں لیکن ویسٹ انڈیز کے خلاف ٹیسٹ میچ میں وہ کافی تذبذب کا شکار رہے۔

پاکستان کے سابق ٹیسٹ کرکٹر دانش کنیریہ نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر لکھا کہ بابراعظم کو اننگ کے آخر میں فاسٹ بالرز کے بجائے اسپنرز کو سامنے لانا چاہیے تھا۔ بابراعظم بہتر انداز میں یاسر شاہ کی بالنگ سے فائدہ نہیں اٹھا سکے۔

پاکستان اور ویسٹ انڈیز کے درمیان دوسرا اور آخری ٹیسٹ میچ 20 اگست کو کنگسٹن میں ہی کھیلا جائے گا۔

Facebook Comments Box