اربوں ڈالرز کا امریکی جدید اسلحہ اب طالبان استعمال کریں گے

رپورٹ کے مطابق بھاری جدید اسلحہ، ایئرکرافٹ اور دیگر جنگی سامان طالبان کے قبضے میں آگیا ہے۔

افغانستان سے امریکی انخلا اپنے آخری مرحلے میں داخل ہوچکا ہے۔ 20 سالوں کی جنگ کے بعد امریکا اربوں ڈالرز کا جدید اسلحہ، ایئرکرافٹ اور دیگر جنگی سامان افغانستان میں چھوڑ کر جارہا ہے۔ برطانوی اخبار دی ٹائمز کے مطابق امریکا کی جانب سے چھوڑے گئے اسلحے کی مالیت 85 ارب ڈالر سے زائد ہے۔

امریکا اور افغان طالبان کے درمیان طے شدہ معاہدے کے تحت کل 31 اگست کو تمام امریکی سیکیورٹی اہلکار کابل ایئرپورٹ خالی کردیں گے۔ 2 دہائیوں پر محیط افغانستان کی جنگ میں امریکا کو بھاری جانی اور مالی نقصان اٹھانا پڑا ہے۔ امریکا نے جنگ کے دوران افغانستان کی فوج کو بھاری جدید اسلحہ، ایئرکرافٹ اور دیگر جنگی سامان مہیا کیا تھا جو کہ اب طالبان کے قبضے میں آگیا ہے۔

برطانوی اخبار دی ٹائمز نے امریکا کی جانب سے افغانستان میں چھوڑے گئے اسلحے کے حوالے  سے رپورٹ جاری کردی۔ رپورٹ کے مطابق اسلحے کی کل مالیت 85 ارب ڈالر سے زائد ہے۔

یہ  بھی  پڑھیے

کابل دھماکوں کے بعد امریکا کا افغانستان میں ڈرون حملہ

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ امریکی فوج نے افغانستان میں 65 جنگی طیارے، 109 جدید ہیلی کاپٹرز، 73 ہزار 132 جنگی گاڑیاں، ٹرک اور ٹینکس چھوڑے ہیں جس پر اب طالبان جنگجو قابض ہوگئے ہیں۔ رپورٹ کے مطابق امریکی فوج نے 3 لاکھ 58 ہزار 530 رائفلز، ایک لاکھ 26 ہزار 295 پسٹلز، 176 توپیں، ایک لاکھ 62 ہزار 43 وائرلیس سیٹ، بلٹ پروف جیکٹس سمیت دیگر جنگی سامان بھی افغانستان میں چھوڑا ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ امریکا کی جانب سے تمام اسلحہ افغانستان کی فوج کو فراہم کیا گیا تھا۔ متعدد مقامات پر افغان فوج نے طالبان سے لڑے بغیر ہی ان کے سامنے ہتھیار ڈال دیے تھے جس کے باعث تمام امریکی ہتھیار اور جدید سامان طالبان کے قبضے میں چلا گیا۔ ماہرین کا ماننا ہے کہ امریکی اہلکار انتہائی جدید آلات افغانستان سے نکلتے وقت اپنے ساتھ لے جانے میں کامیاب ہوگئے ہیں لیکن افغان فوج کو دیا گیا اسلحہ اب طالبان اپنے ملک کی حفاظت کے لیے استعمال کریں گے۔

Facebook Comments Box