اہم شخصیات کی حکومت میں شمولیت کا وعدہ طالبان کے لیے بوجھ بن گیا

سب کو خوش کرنا اور ساتھ لے کر چلنا طالبان کے لیے اہم چیلنج ہے۔

افغانستان  میں حکومت سازی کے عمل کو بڑھاتے ہوئے مختلف شخصیات کی شمولیت کا وعدہ افغان طالبان کے لیے بوجھ بن گیا ہے۔

طالبان  کی  حکومت  میں  کون  کون  شامل  ہوگا؟  یہ  ایک  ایسا  اہم  سوال  ہے  جس  کا  جواب  اب  تک  خود  طالبان  کے  پاس  بھی  شاید  موجود نہیں  ہے۔  اس  وقت  پوری  دنیا  کی  نظریں  افغان طالبان  پر  مرکوز  ہیں  جوکہ  امریکی  انخلا  کے  بعد  حکومت  تشکیل  کرنے  جارہے  ہیں۔

ویسے  تو طالبان کے سیاسی دفتر کے سربراہ ملا برادر حکومت کی قیادت کریں گے جبکہ طالبان کے بانی ملا عمر کے بیٹے ملا محمد یعقوب اور شیر محمد عباس ستانکزئی بھی اہم عہدے سنبھالیں گے۔ طالبان  کو  گزشتہ  روز  اپنی  حکومت  کا  اعلان  کرنا  تھا  لیکن  اب تک  کی  اطلاعات  کے  مطابق یہ  فیصلہ  کچھ  دنوں  کے  لیے موخر  کردیا  گیا  ہے۔  اس  اہم  ترین  فیصلے  میں  دیر  کرنے  کی  چند  خاص  وجوہات  ہیں۔

یہ  بھی  پڑھیے

افغانستان صورتحال: پاکستان سفارتکاری کا مرکز بن گیا

طالبان  نے تمام فریقین پر مشتمل حکومت کے قیام کا عندیہ  تو  دے  دیا  لیکن عبداللہ  عبداللہ،  حامد  کرزئی  اور گلبدین حکمتیار نے  حکومت  میں  اہم  پوزیشنز  مانگ  لی  ہیں۔  اس  مطالبے  کو  ماننا  اب  طالبان  کے  لیے چیلنج ہے۔

ایک کثیر لسانی معاشرہ ہونے کے  باعث افغانستان میں ایسے سیاسی نظام کی تشکیل ہمیشہ ایک چیلنج رہی ہے جو تمام طبقات کی خواہشات کا عکاس ہو۔

افغانستان  کی  قوم  مختلف  قبائل  اور  گروہوں  پر  مشتمل  ہے  جن  میں  پشتون، تاجک، ازبک،  ہزارہ، عرب، ترکمان، بلوچ، پشائی، نورستانی  اور ایمق سمیت  دیگر  شامل  ہیں۔  اب  مشکل  یہ  ہے  طالبان  مختلف  لسانی  گروہوں  سے  حکومت  سے  متعلق بات  چیت  کرنے میں  تو  کامیاب  ہوگئے  تاہم  اب  ان  گروہوں  نے  بھی  اقتدار  میں  اہم  پوزیشنز  مانگنا  شروع  کردی  ہیں۔  ایسے  میں  سب  کو  خوش  کرنا  اور  ساتھ  لے  کر  چلنا طالبان  کے  لیے  ایک  بہت  بڑا  چیلنج  بن  گیا  ہے۔

Facebook Comments Box