اسٹیٹ بینک کی برآمد کنندگان کے لیے زرمبادلہ کے قوانین میں ترمیم

ترمیم کے تحت برآمد کنندگان کو برآمدی آمدنی کو 120 کی زیادہ سے زیادہ مدت میں لانے کی ضرورت ہے

اسٹیٹ بینک کی جانب سے غیر ملکی زرمبادلہ کے بہاؤ کو مستحکم کرنے کی کوششیں جاری ، اسٹیٹ بینک نے غیر ملکی زرمبادلہ کے قوائد و ضوابط میں ترمیم کی ہے جس کے تحت برآمد کنندگان کو تاریخ کی ترسیل کے دن سے  برآمدی آمدنی کو 120 دنوں کی زیادہ سے زیادہ مدت میں لانے کی ضرورت ہے۔

مرکزی بینک کی جانب سے جاری کردہ نوٹس کےمطابق "بروقت برآمدی آمدنی سے مارکیٹ میں زرمبادلہ کی آمد کو بہتر بنانے کے لیے، اسٹیٹ بینک نے زرمبادلہ کے قوانین میں ترامیم کی جس کے تحت برآمد کنندگان کو برآمدی آمدنی کو 120 کی زیادہ سے زیادہ مدت میں لانے کی ضرورت ہے۔ تاریخ کی ترسیل سے دن” اس سے پہلے برآمد کنندگان کو اپنی برآمدی آمدنی زیادہ سے زیادہ 180 دنوں کے اندر لانے کی ضرورت تھی۔

یہ بھی پڑھیے

اسٹیٹ بینک نے ڈیجیٹل بینکنگ کے لیے نئی کیٹیگری متعارف کروا دی

آئی ایم ایف کو صاف بتادیا اسٹیٹ بینک مادرپدر آزاد نہیں ہوگا،وزیرخزانہ

جاری نوٹس میں واضح کیا گیا ہے کہ مرکزی بینک کی جانب سے ترمیم کردہ نیا آرڈر  پاکستان کے قوانین کو بین الاقوامی بہترین طرز عمل کے قریب لے جائے گا”جبکہ نئے اقدام سے مارکیٹ میں زرمبادلہ کی آمد پر مثبت اثر پڑنے کے امکانات مزید روشن ہوجائیں گے۔

نوٹس میں کہا گیا ہے کہ  مرکزی بینک ” بڑھتے ہوئے کرنٹ اکاؤنٹ اور تجارتی خسارے کو مدنظر رکھتے ہوئے پاکستان کی برآمدات کو فروغ دینے کے لیے برآمد کنندگان کی مدد کے لیے مسلسل اقدامات کر رہا ہے اس سلسلے میں زرمبادلہ کے قوانین  میں تبدیلی  کی گئی ہے تاکہ برآمد کنند گان کو زیادہ سے زیادہ سہولیات فراہم کی جاسکیں ۔

واضح رہے کہ حالیہ   مرکزی بینک  نے اس برآمد کنند گان کو سہولیات کی فراہمی کے سلسلے میں اپنے کرنسی قوانین میں کئی پالیسی اقدامات متعارف کرائے ہیں، جن میں برآمد کنندگان کی 10فیصد سالانہ برآمدات کو بیرون ملک ایکویٹی کیپٹل میں بیرون ملک ذیلی اداروں / شاخوں کے قیام کے لیے سرمایہ کاری کرنے کی اجازت دینا بھی شامل ہے ۔

Facebook Comments Box