محکمہ لوکل گورنمنٹ بورڈ اور بلدیہ عظمیٰ کراچی کے درمیان سرد جنگ

سینئر ڈائریکٹر ہیومن ریسورس مینجمنٹ کے ایم سی جمیل فاروقی نے نایاب سعید کو 2 عہدوں سے نواز دیا۔

محکمہ لوکل گورنمنٹ بورڈ سندھ اور بلدیہ عظمیٰ کراچی کے درمیان افسروں کی تقرریوں اور تبادلوں کے معاملے پر سرد جنگ جاری ہے۔ لوکل گورئمنٹ بورڈ نے سندھ کونسل یونیفائڈ گریڈ (ایس سی یو جی) سروس کے حامل گریڈ 18 کے افسر نایاب سعید کا تبادلہ کیا۔ 6 نومبر 2020 کو جاری لیٹر میں نایاب سعید کو محکمہ لوکل گورنمنٹ بورڈ رپورٹ کرنے کی ہدایت کی گئی۔

اسی طرح سینئر ڈائریکٹر ہیومن ریسورس مینجمنٹ کے ایم سی جمیل فاروقی نے نایاب سعید کو 2 عہدوں سے نواز دیا۔ نایاب سعید کے پاس ڈائریکٹر میونسپل یوٹیلیٹی چارجزاینڈ ٹیکس کا چارج تھا جنہیں عہدے سے ہٹا کر لوکل گورنمنٹ رپورٹ کرانے کے بجائے ڈائریکٹر اکاونٹس انجینئرنگ ڈپارٹمنٹ کے ایم سی کا ایڈیشنل چارج دے دیا گیا ہے۔

قانون کے مطابق ایس سی یو جی سروس کے حامل گریڈ 18 کے افسر کی تقرری کا اختیار محکمہ لوکل گورنمنٹ یا چیف سیکریٹری سندھ کے پاس ہوتا ہے۔

محکمہ لوکل گورنمنٹ بورڈ سینئر ڈائریکٹر ایچ آر ایم جمیل فاروقی کی معطلی اور تبادلے کے احکامات بھی 13 نومبر 2020 کوجاری کر چکا ہے۔ جمیل فاروقی کی معطلی کا سبب بھی غیرقانونی تقرریاں کرنا تھا۔ وہ محکمہ لوکل گورنمنٹ بورڈ کے احکامات ہوا میں اڑا چکے ہیں اور بدستور اپنے عہدے پر براجمان ہیں۔

یہ بھی پڑھیے

برنس روڈ کراچی کی قدیم عمارتوں پر رنگ و روغن کے خلاف اقدامات

 

جمیل فاروقی کی معطلی سے متعلق محکمہ لوکل گورنمنٹ بورڈ نے ایک ریمائنڈر بھی جاری کیا گیا تھا۔ انہیں غلط بیانی کرنے پر توہین عدالت پر 10 ہزار روپے جرمانہ بھی عائد کیا جاچکا ہے۔

واضح رہے کہ جمیل فاروقی کو ماضی میں بھی اظہار وجوہ نوٹسز بھی جاری ہوچکے ہیں۔ قانونی ماہرین کا کہنا ہے کہ عدالتی سزا کے بعد جمیل فاروقی عہدے پر نہیں رہ سکتے۔

متعلقہ تحاریر

ایک تبصرہ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے